مائیک پومپیو عمران خان سے تنہائی میں ملنا چاہتے تھے‘ امریکی مشیر قومی سلامتی

129

واشنگٹن(آن لائن)امریکی قومی سلامتی کے مشیر جان بلٹن نے کہاہے کہ امریکا کی جانب سے پاکستان کی عسکری امداد روکنے کا فیصلہ معمولی نہیں تھا کیونکہ ٹرمپ انتظامیہ کو بھرپور ادراک تھا کہ جوہری ملک کے خلاف ایکشن لینے سے ممکنہ طور پر کیا نتائج مرتب ہو سکتے ہیں۔ امریکی تھک ٹینک فیڈرلسٹ سوسائٹی فار لا اینڈ پبلک پالیسی اسٹیڈیز کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ امریکا پاکستان سے دہشت گردی خلاف جنگ میں بھرپور تعاون چاہتا ہے، حقیقت تو یہ ہے کہ امریکا کے لیے یہ انتہائی اہمیت کا حامل ہے۔ انہوں نے کہا کہ میرے آنے سے پہلے ٹرمپ انتظامیہ نے پاکستان کی عسکری امداد کے بڑے حصے کو ختم کرنے کا فیصلہ نہیں کیا تھا۔ان کا کہنا تھا کہ ٹرمپ انتظامیہ کو پورا ادراک تھا کہ پاکستان ایک جوہری ملک ہے اور یہ خدشہ تھا کہ حکومت دہشت گردوں کے ہاتھوں میں یرغمال نہ بن جائے اور وہ جوہری ہتھیا روں پر کنٹرول حاصل نہ کر لیں۔واضح رہے کہ رواں برس جنوری میں ٹرمپ انتظامیہ نے اعلان کیا تھا کہ پاکستان کی جانب سے دہشت گرد تنظیموں کے خلاف کارروائی کے وعدے کو پورا کرنے تک پاکستان کی عسکری امداد کا بڑا حصہ روک دیا گیا ہے۔بعدازاں رواں ماہ میں بھی امریکا نے پاکستان کی دہشت گردی کے خلاف جنگ میں فیصلہ کن کارروائی میں ناکامی پرالزام لگا کر 30 کروڑ ڈالر کی فوجی امداد روک دی تھی۔پینٹاگون کے ترجمان نے بتایا تھا کہ جنوبی ایشیائسے متعلق نئی حکمت عملی میں پاکستان اپنا فیصلہ کن کردار ادا نہیں کرسکا اس لیے 30 کروڑ ڈالر روک دیے گئے ہیں۔انہوں نے کہا تھا کہ اگر کانگریس منظوری دے گی تو مذکورہ رقم دیگر اہم منصوبوں پر خرچ کریں گے۔خیال رہے کہ گزشتہ ہفتے وزیراعظم عمران خان سے امریکی سیکرٹری خارجہ مائیک پومپیو اور چیئرمین جوائنٹ چیفس آف اسٹاف جنرل جوزف ڈونفرڈ کی ملاقات وزیراعظم آفس میں ہوئی جس میں انہوں نے کہا تھا کہ اگر پاکستان دہشت گردوں کو اپنی زمین سے حملے کرنے سے روک دے تو امریکا دوبارہ امداد جاری کر سکتا ہے۔امریکی قومی سلامتی کے مشیر جان بلٹن نے بتایا کہ دہشت گردی پورے خطے کے لیے سنگین مسئلہ ہے لیکن پاکستان کو دہشت گردوں کے خلاف بھرپور کارروائی کرنے کی ضرورت ہے کیونکہ یہ دہشت گردی خود پاکستان کے لیے خطرہ ہے۔انہوں نے زور دیا کہ امریکا کے لیے دہشت گردی انتہائی اہم نوعیت کا مسئلہ ہے اور اسی وجہ سے وہ چاہتے ہیں کہ پاکستان کی نئی حکومت اس مسئلے پر توجہ دے۔ جان بلٹن نے کہا کہ سیکرٹری مائیک پومپیو پاکستان کے وزیراعظم عمران خان سے ملاقات کرنا چاہتے تھے لیکن نہیں کر سکے۔جس پر صحافیوں نے انہیں یاد دلایا کہ عمران خان نے ہی امریکی اور پاکستانی وفد کے اجلاس کی صدارت کی تھی تاہم جان بلٹن اپنی تصحیح نہیں کر سکے۔ بعدازاں بعض شرکانے سمجھا شاید مائیک پومپیو وزیراعظم سے علیحدہ میں ملاقات کرنا چاہتے تھے ۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ

جواب چھوڑ دیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.