آرمی چیف نے 12 دہشتگردوں کی سزا موت کی توثیق کردی 

51

اسلام آباد ( نمائندہ جسارت) آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے12 دہشت گردوں کی سزائے موت کی توثیق کردی ہے۔ دہشت گردوں نے بنوں اور ڈیرہ اسماعیل خان جیلوں پر بھی حملے کیے، ان دہشت گردوں میں غنی رحمن، عبدالغازی، ضیا الرحمن، جاوید خان، محمد زبیر، عمر نواز، ساجد خان، ہیبت خان، احمد شاہ، باز محمد، مومن خان اور سلیمان بہادر شامل ہیں۔مجموعی طور پریہ دہشت گرد7شہریوں اور92
سیکورٹی اہلکاورں کے قتل میں ملوث ہیں جبکہ ان کے حملوں میں58 افراد زخمی بھی ہوئے ،ان دہشت گردوں کو فوجی عدالت نے سزائے موت سنائی۔ آئی ایس پی آرکے مطابق سربراہ پاک آرمی جنرل قمر جاوید باجوہ نے12خطرناک دہشت گردوں کی سزائے موت کی توثیق کر دی ہے۔ ان دہشت گردوں کو خصوصی فوجی عدالتوں نے سزا ئیں سنائیں جبکہ6 دہشت گردوں کو قید کی سزا بھی سنائی گئی ہے، دہشت گرد فورسز پر حملوں اورتعلیمی اداروں کی تباہی میں ملوث تھے۔ عبدالغازی ولد سبیل خان لیفٹیننٹ کرنل یوسف اور دیگر جوانوں کے قتل میں ملوث تھا جبکہ ضیا الرحمن ولد پیرزادہ اور جاوید نور ولد نورزادہ ایس پی بنوں سمیت7 اہلکاروں کے قتل میں ملوث تھا۔ غنی رحمن ولد فضل رحمن بنوں اور ڈی آئی خان جیل پر حملوں میں ملوث تھا اور اس کے دہشت گرد حملے میں کیپٹن فصیح سمیت 4 فوجی شہید جبکہ 12 زخمی ہوئے۔دہشت گرد ضیا الرحمن اور جاوید خان نے ایس پی خیرالحسیب اور دیگر کو شہید کیا تھا، دہشت گرد احمد شاہ نے اے این پی کے ناظم میاں مشتاق سمیت دیگر کو شہید کیا تھا، آرمی چیف نے قید کی سزا پانے والے دیگر 6 دہشت گردوں کی سزا پر عمل درآمد کی منظوری بھی دی ہے۔دفاعی ذرائع نے بتایا کہ اب تک فوجی عدالتوں نے 231 دہشت گردوں کو موت کی سزا سنائی ہے اس میں سے 56 کی سزائے موت پر عمل درآمد ہو چکا ہے،13 دہشت گردوں کوآپریشن رد الفساد سے قبل اور 43 کو رد الفساد کے دوران پھانسی دی گئی اس کے علاوہ 167 دہشت گردوں کو عمر قید سمیت دیگر سزائیں سنائی گئی ہیں جبکہ ایک شخص کو رہائی مل چکی ہے۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ