اشرف المدارس کی سیکورٹی واپس لینے پرسیکرٹری داخلہ سے جواب طلب

55

کراچی (اسٹاف رپورٹر)سندھ ہائی کورٹ نے جامعہ اشرف المدارس کی سیکورٹی واپس لینے کے خلاف دائر درخواست پر سیکرٹری داخلہ سے2جولائی تک جواب طلب کرلیا ہے ۔جمعرات کو سندھ ہائی کورٹ میں جا معہ اشرف المدارس کی سیکورٹی واپس لینے کے خلاف انتظامیہ کی جانب سے دائر درخواست کی سماعت کی ، فاضل عدالت نے درخواست گزار کو اسسمنٹ کمیٹی سے رجوع کرنے کا بھی حکم دیا ہے، سماعت کے موقع پر آئی جی سندھ کی جانب سے جواب داخل کیا گیا جس میں کہا گیا تھا کہعدالت عظمیٰکے
احکامات کی روشنی میں سیکورٹی واپس لی گئی ہے اور سیکورٹی فراہم کرنے کے متعلق اسسمنٹ کمیٹی قائم ہے جبکہ کوئی فریق متاثر ہوا ہے تو اسے کمیٹی سے رجوع کرنا چاہیے، سیکورٹی فراہمی کے لیے کمیٹی کی ہدایت پر عمل درآمد ہوگا، دوران سماعت درخواست گزار کے وکیل خلیل الرحمن عباسی نے عدالت کو آگاہ کیا کہ جامعہ اشرف المدارس میں 5 ہزار 4 سو طلبہ دینی تعلیم حاصل کر رہے ہیں اور مدارس میں غیر ملکی طلبہ بھی زیر تعلیم ہیں،سیکورٹی نہ ہونے کے باعث جامعہ کو خطرات لاحق ہیں جبکہ جامعہ اشرف المدارس پر خود کش حملہ بھی ہو چکا ہے اور خود کش حملے میں مفتی امام مالک جاں بحق ہوئے تھے،اس کے علاوہ 90 کی دہائی سے سیکورٹی گارڈز فراہم کیے گئے تھے،جو اس وقت کے وزیر داخلہ نصیر اللہ بابر نے فراہم کیے تھے ،سیکورٹی فوری فراہم کی جائی بعد ازاں فاضل عدالت نے سیکرٹری داخلہ سندھ سے جواب طلب کرتے ہوئے سماعت 2جولائی تک ملتوی کردی ۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ