راؤانوارکی درخواست ضمانت کی سماعت 4جولائی تک ملتوی

38

کراچی (اسٹا ف رپورٹر)انسداد دہشتگردی کی عدالت میں نقیب اللہ قتل کیس میں سابق ایس ایس پی راؤ انوار کی درخواست ضمانت پر سماعت ، عدالت نے ریمارکس دیے کہ آ ئندہ سماعت پر مقتول کے وکلا حاضر نہیں ہوئے تو ضمانت پر قانون کے مطابق فیصلہ کر دیں گے۔انسداد دہشتگردی کی عدالت میں نقیب اللہ قتل کیس میں سابق ایس ایس پی ملیر راو انوار کی درخواست ضمانت کی سماعت کے موقع پر عدالت کے اطراف سیکورٹی کے غیرمعمولی انتظامات کیے گئے تھے، سخت سیکورٹی میں راؤ انوار، ڈی ایس پی قمر سمیت
دیگر ملزمان کو عدالت میں پیش کیا گیا، راؤ انوار کے وکیل عامر منسوب قریشی نے درخواست ضمانت پر دلائل دیے، عدالت نے نقیب اللہ کے وکلا کی عدم حاضری پر سماعت4جولائی تک ملتوی کردی، عدالت نے مقتول کے وکلا کو دلائل کیلیے آخری مہلت دیتے ہوئے کہا کہ آئندہ سماعت پر مقتول کے وکلا حاضر نہیں ہوئے تو ضمانت پر قانون کے مطابق فیصلہ کر دیں گے، سماعت کے بعد میڈیا سے غیر رسمی گفتگو کرتے ہوئے راؤانوار کا کہنا تھا کہ پولیس نے ذاتی گروپنگ کی وجہ سے مجھ پر قتل کا مقدمہ درج کیا، میرے خلاف نقیب اللہ قتل کیس میں بھی شواہد موجود نہیں ہیں، پروفیشنل جیلسی کی وجہ سے میرے خلاف کارروائی کرائی گئی، جے آئی ٹی میں میرا فون نمبر بھی غلط ڈالا گیا ہے، مجھ پر دو خود کش حملے ہو چکے ہیں میرے گھر کو سب جیل قرار دینا فیور نہیں، ایک شخص نے میرے سر کی قیمت 50 لاکھ روپے مقرر کی جسے بعد میں گرفتار کیا گیا ، مجھے ہر تنظیم کے دہشتگرد نے دھمکی دی ہے، مجھے را اور دیگر کالعدم تنظیموں سے بھی خطرہ ہے، مجھے تھریٹ لیٹر وفاق، صوبائی حکومت اور آئی جی سندھ سے بھی موصول ہوئے ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ