اللہ نے قوم کو سیکولر اور لبرل ازم کے پجاریوں کا راستہ روکنے کا موقع دیا،سراج الحق 

101

لاہور( نمائندہ جسارت ) امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے عید الفطر پر قوم کو مبارک باد دی ہے اورقوم کے نام اپنے پیغام میں کہا ہے کہ قیام پاکستان کا ایک واضح مقصد تھا کہ ہم اس خداداد مملکت کو ایک حقیقی اسلامی و فلاحی ملک بنائیں گے ،اس عظیم مقصد کے حصول کیلیے قوم کو ایک نئے عزم سے اٹھنا ہوگااور اللہ تعالیٰ سے کیے گئے عہد و پیمان کو پورا کرنا ہوگا۔2018کے الیکشن میں تخریبی سیاست کا خاتمہ کرکے پاکستان میں ایک حقیقی جمہوری معاشرے کا قیام ،افراد اور خاندانوں کی بادشاہت کا خاتمہ اور ووٹ کی طاقت سے استحصالی اور کرپٹ قیادت کا محاسبہ ،یہ وہ نمایاں اہداف ہیں جن کو حاصل کیے بغیر ہم آگے نہیں بڑھ سکتے ۔ سینیٹرسراج الحق نے کہا کہ امسال ہم عیدالفطر ایسے حالات میں منا رہے ہیں کہ ملت کفر چاروں طرف سے اسلام اور مسلمانوں کا گھیرا تنگ کیے ہوئے ہے ۔شام ،عراق و افغانستان میں لاکھوں مسلمانوں کا قتل کیا گیا اور یہ سلسلہ اب بھی جاری ہے ،کشمیر، فلسطین اور برما کے مسلمانوں پر زندگی تنگ کردی گئی ہے ،لاکھوں روہنگیا مسلمانوں کو ملک بدر کردیا گیا ہے اور وہ بنگلا دیش اور انڈیا کی سرحدوں پر مارے مارے پھر رہے ہیں ۔فلسطین میں گزشتہ تین ماہ میں اسرائیلی درندوں نے سینکڑوں معصوم لوگوں کو شہید کردیا ہے جن میں بچوں اور خواتین کی بڑی تعداد شامل ہے،یہ لوگ امریکی سفارتخانے کی بیت المقدس منتقلی کے خلا ف احتجاج کررہے تھے ۔ بنگلا دیش اور مصر میں اسلامی تحریک کے قائدین کو عمر قید اور موت کی سزاؤں کا مسلسل سامنا ہے۔دوسری طرف عالم اسلام کی 57ریاستوں کے حکمران امت کی راہنمائی اور ملت کفر سے مسلمانوں کو تحفظ فراہم کرنے کی بجائے عالمی استعمار کے آلہ کار بنے ہوئے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ امریکا افغانستان میں ذلت آمیز شکست کھانے کے باوجود خطے سے مکمل انخلاء پر آمادہ نہیں۔سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ عید کے مبارک موقع پر اپنے مصیبت زدہ بہن بھائیوں کو دعاؤں میں یاد رکھیں۔اپنے ارد گرد موجود حاجت مندو ں،بیواؤں یتیموں اور مسکینوں کو ابھی اپنی عید کی خوشیوں میں شامل کریں۔ سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ ملک میں ایک بار پھر انتخابات کا طبل بج چکا ہے ، 25جولائی کو ملک بھر میں عام انتخابات کا اعلان کردیا گیا ہے ۔ اللہ تعالیٰ نے اب ایک بار پھر عوام کو یہ موقع دیا ہے کہ وہ ان ظالم جاگیرداروں اور بے رحم سرمایہ داروں سے نجات حاصل کرسکیں ،عوامی مقبولیت کی دعویدار پارٹیوں نے ایک بار پھر وہی بہروپئے انتخابی میدان میں اتار دیے ہیں جو ان تمام مسائل کی جڑ ہیں ،جن لوگوں کا احتساب ہونا چاہئے تھا انہیں ایک بار پھر زبردستی عوام کی گردنوں پر مسلط کرنے کی کوشش کی جارہی ہے ۔ اللہ تعالی کا ملک و قوم پر یہ عظیم احسان ہے کہ اس نے دینی جماعتوں کو ایک بار پھر متحدہ مجلس عمل کے پلیٹ فارم پر جمع کرکے سیکولر ازم اور لبرل ازم کے پجاریوں اور نظریہ پاکستان سے بے وفائی کرنے والوں کا راستہ روکنے موقع فراہم کردیا ہے ۔دینی جماعتوں کا اتحادسب سے بڑی طاقت ہے ،یہ قومی یکجہتی اور اتحاد کی طرف بہت بڑی پیش رفت ہے۔انہوں نے کہا کہ آنے والے الیکشن میں متحدہ مجلس عمل عوامی قوت بن کر سامنے آئے گی۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ