ماہی گیر وں کی بستی ریڑھی گوٹھ کی سیکڑوں ایکڑ ساحلی زمین پر بااثر لینڈ مافیا کا قبضہ، چائنا کمپنی کو فروخت کرنے کی تیاری۔

376

کراچی (اسٹا ف رپورٹر) ماہی گیر بستی ریڑھی گوٹھ کے قریب سینکڑوں ایکڑ ساحلی زمین پر بااثر سمندری کا قبضہ قائم، دیوار کی تعمیر کے بعد چائنا کمپنی کو فروخت کرنے کی تیاری شروع۔
تفصیلات کے مطابق ماہی گیروں کے دیومالائی کردار مورڑو میربحر کے صدیوں پرانی بستی ریڑھی گوٹھ کے دبلہ محلہ کے قریب سینکڑوں ایکڑ ساحلی پٹی کی زمین پر مقامی سمندری وڈیرے اور بااثر لینڈ مافیا کی طرف سے قبضہ قائم کرنے کے بعد دیوار کی تعمیر کا کام شروع کردیا گیا ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ مذکورہ ساحلی پٹی کی زمین ریڑھی گوٹھ کا حصہ تھی، جس پر سمندری وڈیرے اور بااثر لینڈ مافیا نے اپنا قبضہ جما لیا تھا اور مذکورہ زمین کے غیر قانونی طور پر کاغذات تیار کرواکر مقامی لوگوں سے زمین کی مالکی کا حق چھین لیا گیا ہے۔ 

ذرائع کے مطابق کراچی کے مبارک ولیج سے پورٹ قاسم تک کی 129 کلومیٹر طویل ساحلی پٹی پر بڑے پیمانے پر لینڈ مافیا کے قبضے قائم ہیں، جنہوں نے سمندر کناروں کو بھرتی کا عمل شروع کر کے بڑے پیمانے پر پلاٹنگ اور غیر قانونی طور پر جیٹیاں قائم کر لی ہیں۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ لٹھ بستی، ریڑھی گوٹھ، چشمہ گوٹھ اور الیاس جت گوٹھ سمیت ابراہیم حیدری تک ہزاروں ایکڑ سرکاری زمینوں پر بااثر لینڈ مافیا نے قبضہ کرنے کے بعد سستے دام غیر قانونی افراد کو فروخت کرنا شروع کردیا ہے۔

ذرائع کے مطابق سمندری وڈیرے اور لینڈ مافیا کو محکمہ روینیو اور پولیس کا مکمل طور پر ناجائز تعاون حاصل ہے، جس کے عیوض روینیو اور پولیس محکمات میں موجود کالی بھیڑوں کو بھی غیر قانونی طور فروخت ہونے والی سرکاری زمینوں کی کمائی میں سے برابر کا حصہ مل رہا ہے۔