مصر: مسجد پر حملہ‘ 235نمازی شہید‘ 130زخمی

649
قاہرہ: مسجد پر دہشت گردوں کے حملے کے بعد امدادی کارروائیاں کی جا رہی ہے
قاہرہ: مسجد پر دہشت گردوں کے حملے کے بعد امدادی کارروائیاں کی جا رہی ہے

قاہرہ ( آن لائن )مصر کے شمالی صوبے سینائی میں واقع مسجد پر نماز جمعہ کے دوران حملے کے نتیجے میں 235 نمازی شہید اور 130زخمی ہو گئے۔ جاں بحق ہونے والوں میں خواتین ، بچے اور فوجی اہلکار بھی شامل ہیں۔یہ واقعہ صوبائی دارالحکومت العریش کے قصبے بیر العباد میں پیش آیا۔ ریاستی نیوز ایجنسی کے مطابق 4دہشت گردوں نے پہلے مسجد پر دستی بم پھینکے اور اس کے بعد گولیاں برسانا شروع کردیں۔حملے میں بظاہر سیکورٹی فورسز کے لوگوں کو نشانہ بنایا گیا جو اس وقت نماز ادا کر رہے تھے۔مصری میڈیا کے مطابق متاثرہ مسجد صوفی مسلک سے تعلق رکھنے والے لوگوں میں مقبول تھی۔یہ بھی اطلاعات ہیں کہ دہشت گردوں نے مسجد کے نزدیک دھماکا خیز مواد نصب کیا تھا جو جمعے کی نماز کے دوران پھٹ گیا۔ عینی شاہدین نے بتایا ہے کہ زخمیوں کو منتقل کرنے کی کارروائی کے دوران دہشت گردوں نے ایمبولینسوں پر بھی فائرنگ کی۔طبی حکام کے مطابق بیشتر زخمیوں کی حالت تشویشناک ہے جس سے ہلاکتوں میں اضافے کا خدشہ ہے۔واقعے کی ذمے داری کسی گروپ نے قبول نہیں کی ہے۔جمعہ کی سہ پہر مصری صدر عبدالفتاح السیسی کی زیر صدارت سیکورٹی کمیٹی کا ہنگامی اجلاس منعقد کیا گیا جس میں دھماکے کے بعد امن وامان کی صورت حال اور آئندہ کے لائحہ عمل پر بات چیت کی گئی۔صدر السیسی نے اس المناک واقعے پر ملک بھر میں 3روزہ سوگ کا اعلان کیا ہے جب کہ ملزموں کی گرفتاری کے لیے سرچ آپریشن شروع کردیا گیا ہے جس کی نگرانی مصری فوج کے سربراہ خود کررہے ہیں۔