کراچی کی عوام کے مسائل کے حل کے لئے ہر ایک تعاون کریں گے،حافظ نعیم الرحمان

188

میئر کراچی وسیم اختر نے جمعرات کے روز دفتر جماعت اسلامی کراچی ادارہ نور حق کا دورہ کیا اور امیر جماعت اسلامی کراچی حافظ نعیم الرحمن اور دیگر ہنماؤں سے ملاقات کی ۔

حافظ نعیم الرحمن نے کراچی کی تعمیر و ترقی اور عوام کے مسائل کے حل کے لیے تعاون کی یقین دہانی کرائی ۔ حافظ نعیم الرحمن نے وسیم اختر کو مولانا موودیؒ کی تفسیر تفہیم القرآن کا تحفہ پیش کیا جبکہ دیگر مہمانوں کو کتب دی گئیں ۔ملاقات میں جسٹس ایسٹ کے چیئرمین معید انور ، اظہار احمد ، اور رابطہ کمیٹی کے رکن اسلم آفریدی ، سکریٹری کراچی عبد الوہاب ،جماعت اسلامی کراچی کے نائب امراء ڈاکٹر اسامہ رضی ، مظفر احمد ہاشمی ،برجیس احمد، مسلم پرویز،ڈپٹی سکریٹری سیف الدین ایڈوکیٹ ، راشد قریشی ، سکریٹری اطلاعات زاہد عسکری ، قاضی صدر الدین ، عنایت اللہ اسماعیل موجود تھے ۔

بعد ازاں حافظ نعیم الرحمن اور وسیم اختر نے دیگر رہنماؤں کے ہمراہ صحافیوں کو ملاقات کے حوالے سے مشترکہ بریفنگ دی ۔حافظ نعیم الرحمن نے کہا کہ میئر کراچی وسیم اختر اپنی ٹیم کے ہمراہ ادارہ نور حق تشریف لائے ہیں ہم خوش آمدید کہتے ہیں ، انہوں نے کراچی کی تعمیر و ترقی کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کیا ہے ۔

انہوں نے کہا کہ جماعت اسلامی نے تین مرتبہ دیانت داری کے ساتھ شہر کی خدمت کی ہے ، بلدیاتی اداروں کی بات ہوتی ہے تو 1987ء میں کراچی کے حقوق کے لیے آواز بلند کرنے پر عبد الستار افغانی کو گرفتار کیا گیا ۔انہوں نے کہا کہ کراچی دنیا کے 100ملکوں سے زیادہ بڑا شہر ہے ہم سب ایک عمل سے گزرر ہے ہیں کراچی کی تعمیر و ترقی کے لیے ہم سب کو مل کر کام کرنا ہوگا ۔انہوں نے کہا کہ ایم کیو ایم کے پاس اختیارات ورکرز کی صور ت میں ہیں اگر ورکرز کو یکجا کیا جائے تو شہر کے حالات بدل سکتے ہیں ، ہمیں مثبت انداز میں سوچنا چاہیئے ہم متحمل نہیں ہوسکتے کہ ہماری سڑکیں ٹوٹی رہیں ، گٹر بہتے رہیں ۔

حافظ نعیم الرحمان نے کہا کہ ہم چاہیں گے کہ وسیم اختر نیک نیتی کے ساتھ شہر کی تعمیر ترقی میں آگے بڑھ کر کام کریں جماعت اسلامی یقین دلاتی ہے کہ ہر نیک کا م میں میئر کے ساتھ مکمل تعاون کرے گی۔

اس موقعے پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے میئر کراچی وسیم اختر نے کہا کہ حافظ نعیم الرحمن بھائی نے خوش آمدید کہا اور ہمیں موقع فراہم کیا کہ ہم کراچی کے مسائل پر ایک ساتھ ہیں ، مسائل پر تبادلہ خیال بھی ہوا ہے ، ہم سیاست سے بالاتر ہوکر کراچی کے مسائل کو حل کریں گے ۔ جماعت اسلامی نے بھی یقین دلایا ہے کہ وہ کراچی کے مسائل کے حل میں میرا ساتھ دیں گے ۔میں اس جذبہ کے تحت یہاں آیا ہوں کہ کراچی کی خدمت کریں ، ہم متحد ہوکر شہر کی جو خدمت کرسکتے ہیں وہ کرنی چاہیئے ۔

وسیم اختر نے کہا کہ اب وقت بتائے گاکہ اب شہر کے ساتھ بہت زیادتیاں ہوچکی ، مختلف جماعتوں کو پالیسی کے تحت لڑایا گیا ، عوام جس کو منتخب کرتے ہیں وہ عوام کے لیے کچھ نہیں کرسکتے ۔ ساڑھے آٹھ سال ہوچکے ہیں شہر کا حال سب کو معلوم ہے ، کراچی کے لوگ اب نوکری نہیں مانگ رہے بلکہ کہہ رہے ہیں کچرا اٹھاؤ ۔ انہوں نے کہا کہ کراچی سب سے زیادہ ٹیکس ہی نہیں زکوٰۃ بھی دیتا ہے ۔

نومنتخب میئر کراچی نے کہا کہ ہمارے پاس اچھی ٹیم ہے ہم کام کرنا چاہتے ہیں ہم سے کام لیا جائے ۔ہم یہ نہیں چاہتے کہ منتخب ہوکر ہاتھ پہ ہاتھ رکھ بیٹھ جائیں کہ اختیارات ہی نہیں ، کراچی کو بہتر کرنا ہی میرا مشن ہے ۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہ جماعت اسلامی کے پاس لوکل ایکسپرٹیز موجود ہیں جنہوں نے بلدیاتی اداروں میں کام کیا ہے اور شہر کی خدمت کی ہے ہم چاہتے ہیں کہ وہ افراد ہمارے ساتھ مل کر کام کریں ہمارے ساتھ مکمل تعاون کریں۔