برصغیر میں اسلام کے احیا اور آزادی کی تحریکیں

40

قسط نمبر157
(پندرھواں حصہ)

پاکستان کی فوجی تیاریوں کا حال کچھ بہت حوصلہ افزا نہیں تھا۔ ایسا بھی نہیں تھا کہ ہماری حکومت کو ہندوستان کے عزائم کا اندازہ نہیں تھا، مگر اس کے باوجود حیرت اس بات پر ہے کہ مرکزی حکومت نے آنے والے خطرے سے نمٹنے کے لیے کوئی خاص تیاری کیوں نہیں کی!
جس وقت ہماری مرکزی حکومت نے ’’آپریشن سرچ لائٹ‘‘ کا آغاز کیا تھا اُس وقت مشرقی پاکستان میں ہماری کُل نفری محض 14 ڈویژن باقاعدہ فوج پر مشتمل تھی۔
جب صدر یحییٰ خان کے دستور ساز اسمبلی کا اجلاس طلب نہ کرنے پر شیخ مجیب بھڑک اٹھے اور مارچ 1971ء میں عدم تعاون کی تحریک شروع ہوگئی جس کی وجہ سے 25 مارچ 1971ء کو فوج نے ان کو گرفتار کرلیا اور مشرقی پاکستان میں فوجی کارروائی شروع کردی، مکتی باہنی کے تربیت یافتہ غنڈے باقاعدہ حملے شروع کرچکے تھے۔ گرفتاری سے قبل شیخ مجیب الرحمان نے ریڈیو مشرقی پاکستان پر بنگالیوں کو پیغام دیتے ہوئے کہا کہ’’ہوسکتا ہے یہ میرا آخری پیغام ہو۔ آج بنگلہ دیش کی آزادی کا دن ہے۔ آپ جو بھی ہیں اور جہاں بھی ہیں اپنی آزادی کے لیے لڑیں‘‘۔ تقریر کے آخر میں اس نے ’’جے بنگلہ‘‘ نعرہ لگایا۔ اس گرفتاری کے اگلے روز پاکستانی فوج سے بغاوت کرنے والے بنگالی لبریشن آرمی کے میجر ضیاء الرحمن نے اپنے سینئر پاک فوج کے بریگیڈیئر جنجوعہ کو بہانے سے بلوایا اور انہیں ان کے اہلِ خانہ سمیت سفاکانہ طریقے سے قتل کردیا، اس کے ساتھ ہی مشرقی پاکستان کے مختلف ریڈیو اسٹیشنوں پر بنگلہ دیش کی آزادی کا اعلان کیا گیا۔
بغرضِ ملازمت راقم دو مرتبہ بنگلہ دیش کا دورہ کرچکا ہے۔ مشرقی پاکستان کے حوالے سے حالات کو جاننے اور سچائی تلاش کرنے کے لیے مجھے غیر جانب دار بن کر مکتی باہنی کے کمانڈرز اور فوج کے ان افسران سے معلومات حاصل کرنے کا موقع ملا، اور بہت قریب سے جماعت اسلامی کی مرکزی قیادت (جن میں سے تین رہنماؤں کو پھانسی دی جا چکی ہے) سے ملنے کی سعادت بھی حاصل ہوئی۔ ان ملاقاتوں میں مجھے یہ جاننے کا موقع ملا کہ وہ کیا اسباب تھے جن کی وجہ سے مشرقی پاکستان کے دولخت ہونے کا سانحہ پیش آیا؟ اور یہ بھی کہ کیا جماعت اسلامی بنگلہ دیش کو اپنے اس فیصلے پر کوئی شرمندگی یا ندامت ہے جو انہوں نے پاک فوج کا ساتھ دے کر پاکستان بچانے کی آخری کوشش کی تھی؟
(اس ضمن میں اپنے ذاتی مشاہدات، ملاقاتوں اور انٹرویوز کو ان شاء اللہ آئندہ کی اقساط میں پیش کروں گا)
جناب قطب الدین عزیز نے اپنی کتاب Blood and Tears میں بے شمار واقعات لکھے ہیں۔ ان کا ذکر بھی آئندہ کریں گے۔ تاہم پھر بھی میں اس وقت ایک ایسے سچے واقعے کا ذکر ضرور کرنا چاہوں گا، جس کا تعلق ہمارے اپنے خاندان سے ہے۔
یہ آپ بیتی میرے قریبی عزیز عارف بھائی کی ہے جو اس قتلِ عام کے چشم دید گواہ ہیں اور آج کل امریکا میں مقیم ہیں، وہ اُس وقت نویں جماعت کے طالب علم تھے۔ اپنے اہلِ خانہ کے ساتھ چٹاگانگ میں تھے، والد سرکاری ملازم تھے اور ان کی پوسٹنگ چٹاگانگ مشرقی پاکستان میں تھی۔ وہ بتاتے ہیں کہ اس رات جب میجر ضیاء الرحمان نے کچھ فوجیوں کو قتل کیا، پورے شہر میں خوف و ہراس پھیل گیا۔ ہم سرکاری کوارٹرز میں رہتے تھے، ہماری آبادی کی اکثریت غیر بنگالیوں پر مشتمل تھی، تاہم کچھ مکانات میں بنگالی خاندان بھی آباد تھے۔ ہمارے گھر والے سہمے ہوئے تھے۔ وہ کہتے ہیں کہ ’’ابا جان جو عام حالات میں شام چھ بجے تک گھر آجاتے تھے، اس شام ابھی تک گھر نہیں لوٹے تھے۔ مغرب کا اندھیرا پھیل چکا تھا۔ ایسے میں غالباً سات بجے کا وقت ہوگا، دس پندرہ مسلح لڑکوں نے ہمارے محلے کو گھیرے میں لے لیا اور فائرنگ شروع کردی۔ ہم تمام گھر والے ایک کمرے میں جمع ہوگئے۔ اتنے میں مسلح لڑکوں نے غیر بنگالیوں کے دروازوں کو کھٹکھٹانا شروع کردیا۔ ماں اور بہنیں دیوار پھاند کر پڑوس کے گھر میں کود گئیں اور میں تنہا اسی کوارٹر میں رہ گیا۔ کچھ دیر تک دروازہ بجتا رہا اور پھر وہ غنڈے دروازہ توڑ کر اندر داخل ہوئے اور مجھے لاتیں اور گھونسے مارتے مارتے باہر میدان میں لے آئے۔ میں نے دیکھا کہ اس میدان میں 30، 35 لڑکے اور مرد جمع تھے اور سب کے سب ان وحشی درندوں کے آگے بے بس تھے۔ وہ ہم سب کو تشدد کا نشانہ بنارہے تھے۔ ان کا کہنا تھا کہ کہو ’’جے بنگلہ‘‘۔ ہم میں سے کسی نے ’’جے بنگلہ‘‘ کا نعرہ نہیں لگایا۔ طیش میں آکر انھوں نے بندوق کے بٹ سے اندھادھند مارنا شروع کیا۔ اسی اثنا میں ایک فوجی ٹرک قریب سے گزرا اور ایک فوجی جیپ آتی دکھائی دی۔ فوج کی آمد پر گھبراہٹ کے عالم میں ان غنڈوں نے ہم سب پر فائر کھول دئیے۔ دیکھتے ہی دیکھتے لاشیں گرنے لگیں‘‘۔ وہ کہتے ہیں کہ ’’میں نے اپنے آپ کو بھی زخمیوں کی طرح ان لاشوں پر گرا لیا اور آنکھیں موند کر بے حس و حرکت ایک لاش کی طرح لیٹا رہا۔ فوجی ٹرک کے میدان تک آتے آتے یہ غنڈے فائرنگ کرتے ہوئے گلیوں میں بھاگ چکے تھے۔ اس حملے میں واحد زندہ بچ جانے والا فقط میں ہی تھا، میں نے اپنے اوپر ایک شہید کا جسم ڈالا ہوا تھا، میرا سارا بدن خون میں لت پت تھا۔ پاکستانی فوج کے جوانوں نے دیگر لاشوں کی طرح ایک لاش کی طرح مجھے بھی اٹھاکر اپنے ٹرک میں ڈالنے کی کوشش کی، کچھ زخمی تھے مگر اسپتال پہنچنے تک وہ بھی شہید ہوچکے تھے۔ جب مجھے یہ تسلی ہوگئی کہ یہ پاک فوج ہے تو میں نے انہیں اپنے زندہ ہونے کا ثبوت دیتے ہوئے آنکھیں کھولیں اور پاکستان زندہ باد کہنا شروع کیا۔ اُس وقت تک مجھے نہیں معلوم تھا کہ میری امی اور بہنیں کس حال میں اور کہاں ہیں؟ ابو واپس زندہ سلامت پہنچے کہ نہیں؟ میں فوجی اسپتال کے ایک کیمپ میں تھا اور پھر دو دن بعد امی اور بہنوں کا معلوم ہوا کہ وہ خیریت سے ہیں، انھوں نے ایک بنگالی خاندان میں پناہ لی ہوئی ہے۔ ابو کو غنڈوں نے گھر آتے ہوئے راستے میں ہی شہید کردیا تھا۔ کچھ دن بعد ہم نے کسی نہ کسی طریقے سے رانگا ماٹی جانے کا فیصلہ کیا۔ یہ پہاڑی علاقہ تھا اور قدرے محفوظ تھا۔ کچھ دن رانگا ماٹی میں گزار کر ہم ڈھاکا چلے آئے۔‘‘
بنگالی افسر میجر ضیاء الرحمان کی بغاوت اور قتل و غارت کے ساتھ ہی مارچ 1971ء میں چٹاگانگ آگ و خون میں نہا چکا تھا۔
غیر بنگالی آبادی میں قتل عام شروع ہوگیا تھا۔ فوجی چھاؤنیاں غیر محفوظ تھیں۔
قطب الدین عزیز اپنی کتابBlood and Tears لکھتے ہیں کہ ’’مارچ کے پہلے ہفتے میں صورت حال خاصی تشویش ناک ہوچکی تھی۔ عوامی لیگ نے غیر بنگالی اور بہاری آبادیوں کو نشانہ بنانا شروع کردیا تھا۔ ان بگڑتے حالات کی خبریں روکنے کے لیے فیڈرل انفارمیشن منسٹری کی خاص ہدایات جاری ہوچکی تھیں کہ کوئی بھی ایسی خبر شائع نہ کی جائے جس میں غیر بنگالیوں کی ہلاکت کا ذکر ہو۔ اسی طرح کا حکم مغربی پاکستان کے لیے بھی جاری کیا گیا تھا۔
کتاب کے پہلے باب میں وہ لکھتے ہیں کہ حالات تیزی کے ساتھ بگڑتے چلے گئے اور مارچ کے تیسرے ہفتے میں مشرقی پاکستان میں دہشت گردی کے شکار، خوف سے سہمے ہوئے 5000 افراد پر مشتمل خاندان کراچی پہنچے، مگر اس خبر کو چھاپنے کی جرأت کسی بھی اخبار کو نہیں تھی۔ انفارمیشن ڈپارٹمنٹ ظاہر کرنا چاہ رہا تھا کہ مشرقی پاکستان میں کوئی بھی پُرتشدد کارروائی نہیں ہورہی، اور سب کچھ نارمل ہے… غیر ملکی میڈیا مشرقی پاکستان کی خبریں جاری کررہا تھا، مگر مقامی پریس پر پابندی تھی کہ ان خبروں کی یہاں اشاعت نہیں ہونی چاہیے۔ daily christian science monitor اور daily milwaukee journal of march 14, 1971 کی خبروں کا حوالہ دیتے ہوئے لکھا کہ ’’غیر ملکی ذرائع اس طرح کی خبریں رپورٹ کررہے تھے کہ ’’عوامی لیگ کے احتجاج کے دوران بہت بڑے پیمانے پر قتل عام، جلاؤ گھیراؤ اور لوٹ مار کی وارداتیں ہورہی ہیں… ٹیلی فون کا نظام غیر فعال ہوچکا ہے اور آپس میں رابطے کی صورت ختم ہوکر رہ گئی ہے، رابطے کا واحد ذریعہ صرف اور صرف ائیر سروس ہے…‘‘ بدقسمتی سے ہزاروں مسلم خاندان جو ہجرت کرکے مشرقی پاکستان میں آباد ہوچکے تھے اُن کو ناراض بنگالیوں کی جانب سے بدترین قتل عام کا سامنا کرنا پڑرہا تھا۔‘‘
ان حالات میں بالآخر اپریل کے پہلے ہفتے میں مغربی پاکستان سے تازہ دم نفری مشرقی پاکستان بھیجی گئی جن میں 2 ڈویژنل ہیڈ کوارٹرز،5 بریگیڈ ہیڈکوارٹرز، ایک کمانڈو بٹالین اور بارہ انفنٹری بٹالین شامل تھیں۔ اور حیرت کی بات تھی کہ یہ اپنے بھاری ہتھیار یعنی توپیں وغیرہ مغربی پاکستان ہی میں چھوڑ آئے، جس کی وجہ یہ بیان کی جاتی ہے کہ اس اضافی نفری کا مقصد جنگ نہیں بلکہ محدود آپریشن کے ذریعے باغیوں کی سرکوبی تھا۔
تین انفنٹری ڈویژن مشرقی پاکستان میں موجود تھی جن کے پاس نہ تو ضرورت کے مطابق بھاری اسلحہ تھا اور نہ ہی کور تھا۔ پاکستان کی یہ فوج نامکمل آلاتِ حرب لے کر محدود ساز و سامان، مگر ایک بہت بڑے جذبے کے ساتھ مشرقی پاکستان پہنچی تھی۔
ان حالات میں پاک فوج کے پاس دوسری جنگ عظیم کے فرسودہ قسم کے چند ٹینکوں کے سوا کچھ نہیں تھا۔ ان ٹینکوں کا حال بھی یہ تھا کہ ان کو بلڈوزر کی مدد سے کھینچنا پڑتا تھا۔ پھر نرم اور گیلی زمین پر بھاری بھرکم ٹینکوں کے ساتھ کسی آپریشن میں جانا انتہائی دشوار تھا۔
مشرقی پاکستان میں پاک فضائیہ کی کُل طاقت 12 عدد ایف 86 طیارے تھے جن میں سے ایک ناقابلِ استعمال تھا۔ بحریہ کے پاس 4 جنگی کشتیاں تھیں جو جنگ کے مقصد سے نہیں بلکہ اسمگلنگ کی روک تھام اور شرپسندوں کے تعاقب کے لیے تھیں، ان میں سے بعض میں mm 50 اور کچھ میں mm 12.7 کی توپیں نصب تھیں، یہ کسی بھی طور پر جنگی آبدوزوں کا مقابلہ کرنے کے قابل ہی نہیں تھیں۔
البتہ ہنگامی بنیادوں پر تشکیل دی جانے والی البدر، رضاکار، اسکاؤٹس وغیرہ پر مشتمل نیم عسکری ٹیم بہرحال موجود تھی جس کی تعداد 73 ہزار تھی۔
حوالہ جات: روزنامہ پاکستان۔ کالم نگار سید وجیہ الحسن بخاری۔ 20 جولائی 2016ء
معروف صحافی حامد میر
“Blood and Tears’۔ قطب الدین عزیز کی کتاب
البدر… مصنف پروفیسر سلیم منصور خالد
(جاری ہے)

حصہ