صہیونی طاقتیں قبلہ اول کے ساتھ عالم اسلام کے عقیدے پر حملہ آور ہیں، مفتی اعظم فلسطین

78

فلسطین کے مفتی اعظم الشیخ محمد حسین نے کہا ہے کہ اسرائیلی ریاست کی قبلہ اول کے خلاف جاری سازشوں پر فلسطینی قوم بیدار ہوچکی ہے اور اب قبلہ اول کے دروازے پر ایک نئی انتفاضہ دستک دے رہی ہے۔

تفصیلات کے مفتی اعظم فلسطین نے اپنے جاری کردہ بیان میں کہا ہے کہ صہیونی فوجیوں کا باب رحمت اور مصلیٰ رحمت میں جوتوں سمیت داخل ہونا، یہودی آبادکاروں کی قبلہ اول کی بے حرمتی، صہیونی ارکان پارلیمنٹ اور وزراء کے مسجد اقصیٰ پر دھاوے اور تلمودی تعلیمات کے مطابق مذہبی رسومات کی ادائیگی کی اشتعال انگیزی نے فلسطینی قوم کو دفاع مقدسات کی ایک نئی تحریک پر مجبور کیا ہے۔

الشیخ محمد حسین کا کہنا تھا کہ فلسطینیوں نے مصلیٰ باب رحمت کے دفاع کا عزم کیا ہے۔ فلسطینی قوم نے صہیونی ریاست کی تمام چالاکیوں اور سازشوں کو مسترد کردیا ہے۔ اسرائیل نے القدس کے فلسطینیوں کو مسجد اقصیٰ سے دور رکھنے اور القدس کی دینی شخصیات کو القدس سے بے دخل کرنے کی نسل پرستانہ سازشیں شروع کی ہیں۔

الشیخ محمد حسین نے بالعموم پوری مسلم دنیا بالخصوص فلسطینی قوم پر زور دیا کہ وہ قبلہ اول کےدفاع کے لیے عملی اقدامات کریں۔ انہوں نے فلسطینیوں پر زور دیا کہ وہ مسجد اقصیٰ میں روزانہ کی بنیاد پر اپنی حاضری کو یقینی بنائیں اور قبلہ اول کے دفاع کے لیے زیادہ سے زیادہ نمازیں مسجد اقصیٰ میں ادا کریں۔

مفتی اعظم فلسطین کا کہنا تھا کہ صہیونی دشمن القدس کی تاریخ، تہذیب اور اسلامی تشخص مٹانے کی مکروہ سازشوں میں سرگرم ہے۔ اسرائیل اور صہیونی طاقتیں قبلہ اول کے خلاف سازشوں کے ساتھ عالم اسلام کے عقیدے پرحملہ آور ہیں۔ القدس پر صہیونی یلغار فلسطینی قوم اور پوری مسلم دنیا کے ایمان اور عقیدے پر حملے کے مترادف ہے۔