ملیر ڈیولپمنٹ اتھارٹی قرعہ اندازی کی حتمی تاریخ کا اعلان نہ کر کے شہریوں کو شکوک و شبہات میں مبتلا کر دیا ،

206

کراچی (رپورٹ:منیر عقیل انصاری)ملیر ڈیولپمنٹ اتھارٹی نے تیسر ٹاؤن میں نئی رہائشی اسکیم کا اعلان تو کر دیا مگر قرعہ اندازی کی حتمی تاریخ کا اعلان نہ کر کے شہریوں کو شکوک و شبہات میں مبتلا کر دیا ، 

شہریوں کا کہنا ہے کہ اگر قر عہ اندازی میں تاخیر کی گئی تو خدشہ ہے کہ بہت سے لوگ اس اسکیم سے بدد ل ہو جائیں کیونکہ انہیں اس بات کا خدشہ ہے کہ ایم ڈی اے اسکیم کی مد میں حاصل ہونیوالی اربوں روپے کی رقم کو فکسڈ ڈیپازٹ کر وا کر آمدنی کا ذریعہ بنا سکتی ہے اوراگر 6ماہ بھی قرعہ اندازی میں تاخیر کی گئی تو فکسڈ ڈیپازٹ کے ذریعے لاکھوں روپے منافع ایم ڈی اے کے اکاؤنٹ میں منتقل ہو جائے گا،

مزید تاخیر کی صورت میں ڈیپازٹ منافع کا حجم کروڑوں روپے تک پہنچ سکتی ہے اس طرح ملیر ڈیولپمنٹ اتھارٹی کو اس ڈیپازٹ کا پورا پورا فائدہ ہو گا، جبکہ1ہزار روپے فارم کی مد میں ناقابل واپسی فیس سے ہونیوالی آمدنی الگ ہے۔ ایم ڈی اے نے تیسر ٹاؤن اسکیم میں فارم جمع کرانے کی آخری تاریخ30مارچ مقرر کی ہے،

ملیر ڈیولپمنٹ اتھارٹی نے اپنی ویب سائٹ یا اشتہار میں یہ بھی واضح نہیں کیا کہ اس اسکیم میں کتنے پلاٹ ہوں گے جبکہ اس کے لیے کتنی زمین مختص ہے۔معلوم ہوا کہ ملیر ڈیولپمنٹ اتھارٹی کی تیسر ٹاؤن اسکیم میں شہریوں نے گہری دلچسپی لی ہے ،

جس کی وجہ سے اب تک شہریوں کی جانب سے450لاکھ فارم وصول کئے جا چکے ہیں محتاط اندازے کے مطابق اگر وصول کئے گئے فارم میں سے50فیصد فارم جمع کرائے جاتے ہیں تو یہ تعداد250لاکھ ہو گئی اور اس مد میں ایم ڈی اے کو25کروڑ روپے حاصل ہوں گے جبکہ زمینوں کی کیٹیگری کی مد میں وصول کی جانے والی رقم 1ارب روپے تک پہنچ سکتی ہے اور اس رقم کو بینک میں چند ماہ کیلئے فکسڈ ڈیپازٹ کرائے جانے پر ایم ڈی اے کا ریکارڈ منافع ملے گا۔

قرعہ اندازی کے حوالے سے ایم ڈی اے کے ڈائریکٹر لینڈ ایوب فضلانی کا کہنا ہے کہ قرعہ اندازی شفاف بنانا اولین ترجیح ہے، فارم وصولی کا مرحلہ مکمل ہونے کے بعد اپریل میں ہی قرعہ اندازی ہو سکتی ہے، تاہم قرعہ اندازی کی حتمی تاریخ کا اعلان نادرا کی مشاورت سے کیا جائے گا۔

ان کا کہنا ہے کہ ایم ڈی اے کے کم قیمت رہائشی منصوبے کے تحت تقریباً 30 ہزار پلاٹ دستیاب ہوں گے، جن میں سے لگ بھگ 80 فیصد پلاٹس 80 اور 120 گز کے ہوں گے۔ان کا مزید بتایا کہ شہری تمام کیٹیگریز میں پلاٹ کے حصول کے لیے قسمت آزما سکتے ہیں، اگر کسی کا ایک سے زائد کیٹیگریز میں پلاٹ نکلا تو اسے کسی ایک کیٹیگری کا انتخاب کرنا ہوگا،

دیگر کامیاب پلاٹوں کی درخواست واپس لینی ہو گی، ان پلاٹوں کے حوالے سے بعد ازاں دوبارہ قرعہ اندازی کی جائے گی۔قرعہ اندازی کے بعد وہ امیدوار جن کے نام پلاٹ نہ نکلا ہو،

ان کے حوالے سے ان کا کہنا تھا کہ ناکام امیدواروں کو قرعہ اندازی کے ایک ماہ بعد رقوم کی واپسی شروع کردی جائے گی جبکہ انہیں یہ رقم بینک کی اسی شاخ سے ملے گی جہاں انہوں نے اپنے فارم جمع کروائے ہوں گے۔

خیال رہے کہ مارچ 2019 میں ایم ڈی اے نے تیسر ٹاؤن میں نئی رہائشی اسکیم کا اعلان کیا ہے، جس میں 4 مختلف مراحل میں قرعہ اندازی کے ذریعے رہائشی پلاٹ دیئے جائیں گے۔