شام اور عراق سے امریکی فوج نہ نکالنے کا اعلان

115

امریکا کے قومی سلامتی کے مشیر جون بولٹن نے کہا ہے کہ شدت پسند گروپ ‘داعش’ عالمی سلامتی اور مشرق وسطیٰ میں امن کے لیے خطرہ ہے اس لیے امریکا اپنی  فوج شام اور عراق سے مکمل طورپر واپس نہیں‌ بلائے گا۔

جون بولٹن نے ٹی وی انٹرویو میں کہا کہ شام میں داعش کے خلاف اتحاد میں امریکا، فرانس اور برطانیہ کی شراکت مثبت پیش رفت جبکہ  امریکی فوج کے ساتھ فرانسیسی فوج کا اشتراک خوش آئند ہے۔

انہوں نے کہا کہ شام میں موجود رہنے والے امریکی فوج کی تعداد کے بارے میں فی الوقت حتمی فیصلہ نہیں کیا گیا، وائیٹ ہائوس حکام کے مطابق شام میں فوج موجودگی اور تعداد سے متعلق مسلح افواج کی قیادت صلاح مشورہ کررہی ہے۔

انہوں نے کہا کہ شام میں داعش کے خاتمے کے حوالے سے صدر ٹرمپ اور مشرق وسطیٰ میں امریکی سینٹرل کمانڈ کےسربراہ جنرل جوزف فوٹیل کے بیانات میں اختلاف نہیں، داعش کی خلافت کےخاتمے کو تنظیم کے خاتمے کے معنی میں ہر گز نہیں لیا جاتا۔

جون بولٹن کا مزید کہنا تھا کہ شام اور عراق میں موجود داعش کے خطرے کے پیش نظر عراق میں امریکی فوج کے ساتھ شام میں بھی امریکی فوجی مبصرین موجود رہیں گے۔