نواز زرداری بقیہ زندگی جیل میں گزاریں گے یا لندن میں ،فواد چوہدری

59

لاہور (مانیٹرنگ ڈیسک) وفاقی وزیر اطلاعات ونشریات فواد چودھری نے کہا ہے کہ جیسے ہی کوئی بڑا آدمی جیل جائے تو پھر بیمار ہو جاتا ہے،نواز شریف اور آصف زرداری نے بقیہ زندگی جیل میں گزارنی ہے یالندن میں ،عدالت اور نیب دیکھے جو ان کے ساتھ کیا سلوک ہونا چاہیے ،پنجاب میں بڑی تبدیلی لائی جارہی ہے ، ق لیگ کے ساتھ سنجیدہ نوعیت کے اختلافات نہیں ہیں، صحت کارڈز کے پہلے مرحلے کا افتتاح آج کیا جائے گا، وزیراعظم نے وزیراعلیٰ کو سانحہ ساہیوال کے متاثرہ خاندانوں کو انصاف کی فراہم کرنے کی ہدایت کی ہے۔لاہور میں وزیراعظم کے زیر صدارت اجلاس کے بعد میڈیا نمائندوں سے گفتگو میں فواد چودھری نے اس دوران ہونے والے اہم فیصلوں کے بارے میں آگاہ کیا۔ ان کا کہنا تھا کہ گیس کے زاید بلوں حوالے سے شکایات سامنے آئی ہیں، گیس کے نرخ غریبوں کے لیے نہیں بلکہ امیروں کے لیے بڑھائے گئے ہیں، اس پر وزیراعظم عمران خان نے وزیر پیٹرولیم کو زاید بلوں کے بارے میں تحقیقات کا حکم دیا ہے۔فواد چودھری نے بتایا کہ اجلاس میں پنجاب کی گورننس بارے غور کیا گیا ہے۔ پولیس ریفارمز بارے ایک اور اجلاس اسلام آباد میں ہو گا جبکہ آج سے صحت کارڈ کا پہلا مرحلہ شروع کرنے جا رہے ہیں۔وزیر اطلاعات کا کہنا تھا کہ وزیراعظم عمران خان کے زیر صدارت اجلاس میں سانحہ ساہیوال کی فیملی سے اظہار یکجہتی کیا گیا ہے، متاثرہ خاندان کو انصاف فراہم کیا جائے گا۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ مسلم لیگ ق ایک الگ جماعت ہے، اس کے ساتھ اختلافات کی نوعیت زیادہ شدید نہیں ہے۔سابق وزیراعظم کے بارے میں سوال کا جواب دیتے ہوئے فواد چودھری نے کہا کہ جیسے ہی کوئی بڑا آدمی جیل جائے تو پھر بیمار ہو جاتا ہے، نواز شریف کی صحت کا معاملہ ڈاکٹرز نے طے کرنا ہے۔ جو لوگ 30 سال اقتدار میں رہے ہوں اور بیرون ملک علاج کا کہیں تو انہیں شرم سے ڈوب مرنا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ نواز شریف کو سلیوٹ کرنے پر کسی پولیس اہلکار کو تبدیل نہیں کیا، ہم چھوٹے دل کے لوگ نہیں ہیں۔ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ نواز شریف اور آصف زرداری کی زندگی کا آخری سسپنس صرف یہی رہ گیا ہے کہ انہوں نے زندگی جیل میں گزارنی ہے یا لندن میں گزارنی ہے۔ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ نواز شریف کو سلیوٹ کرنے والے ایلیٹ فورس اہلکا رکے خلاف کوئی کارروائی نہیں ہورہی اتنے چھوٹے نہیں کہ صرف سلیوٹ پر ہی کارروائی کردیں۔