آسیہ بی بی کے وکیل کو پاکستان چھوڑنے پر مجبور نہیں کیا،اقوام متحدہ

88

جینوا/ روم (مانیٹرنگ ڈیسک) اقوام متحدہ نے آسیہ بی بی کے وکیل سیف الملوک کے دعوؤں کو مسترد کردیا۔ اقوام متحدہ نے آسیہ بی بی کے وکیل کی جانب سے ان کی مرضی کے خلاف بیرون ملک لے جانے سے متعلق لگائے جانے والے الزامات کی تردید کردی۔میڈیا رپورٹ کے مطابق اقوام متحدہ کے ترجمان ایری کانیکو کا کہنا تھا کہ اقوام متحدہ نے پاکستان میں سیف الملوک کی درخواست پر انہیں سہولت فراہم کی تھی اور انہیں ان کی مرضی کے خلاف ملک چھوڑنے پر مجبور نہیں کیا گیا۔ ترجمان کا مزید کہنا تھا کہ نہ ہی اقوام متحدہ کسی بھی فرد کو اس کی مرضی کے خلاف ملک چھوڑنے پر مجبور کرسکتا ہے۔ دریں اثنا اٹلی کا کہنا ہے کہ وہ پاکستانی شہری اور مسیحی خاتون آسیہ بی بی، جن کو توہین مذہب کے الزام میں زندگی کے خطرات لاحق ہیں، کو ملک چھوڑنے میں مدد کریں گے۔ اٹلی کے ڈپٹی پرائم منسٹر میٹیو سلوینی کا کہنا تھا کہ میں چاہتا ہوں کہ ایسی خواتین اور بچے جن کی زندگی خطرے میں ہے‘ انہیں اپنے ملک میں یا دیگر مغربی ممالک میں محفوظ مستقبل دے سکیں اور اس کے لیے میں تمام کوششیں کروں گا۔ میٹیو سلوانی نے اطالوی ریڈیو سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ اٹلی اس معاملے پر دیگر ممالک کے ساتھ مل کر کام کر رہا ہے۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ