آسیہ کو مجرم قرار دیئے جانے تک نام ای سی ایل میں نہیں ڈال سکتے ،شہریار آفریدی

116

اسلام آباد (صباح نیوز) وزیر مملکت برائے داخلہ شہریار آفریدی نے کہا ہے کہ حکومت عدالت عظمیٰ کے فیصلے پر عمل کرے گی اور جب تک آسیہ بی بی کو مجرم قرار نہیں دیا جاتا اس وقت تک نام ای سی ایل میں نہیں ڈال سکتے، ہر پاکستانی خواہ وہ جس مذہب یا مسلک کا ہو اس کو تحفظ فراہم کرنا ریاست کی ذمے داری ہے، کسی کو جان و مال سے کھیلنے کا لائسنس نہیں دیا جاسکتا،آسیہ بی بی اور ان کا خاندان پاکستان میں ہے اور حکومت کی جانب سے انہیں مکمل سیکورٹی فراہم کی جارہی ہے۔ غیر ملکی خبر رساں ادارے کو انٹرویو کے دوران وزیر مملکت برائے داخلہ شہریار آفریدی نے ملک میں حالیہ احتجاج پر بات کرتے ہوئے کہاکہ اس میں ایک وہ لوگ تھے جو اپنے ذاتی مفاد اور ایجنڈے کے ذریعے بغض پورا کرنے کے لیے املاک کو نقصان پہنچا رہے تھے۔انہوں نے کہا کہ معاہدے میں شامل تحریک لبیک کے ارکان کو جب ان کا بتایا گیا اور فوٹیجز دکھائی گئیں تو انہوں نے انہیں اپنی جماعت کا ماننے سے انکار کردیا۔ وزیر مملکت کا کہنا تھا کہ قانون پر جب کوئی سمجھوتا کرے گا تو پھر وہ بنانا ریاست ہوگی، جو بھی گرفتاریاں ہوئیں انہیں قانونی طریقے سے ٹریٹ کیا جائے گا، جو قانون کو توڑے یا اسے چیلنج کرے گا وزیراعظم اور دیگر حکام کا واضح مؤقف ہے اس پر کوئی سمجھوتا نہیں ہوگا۔علاوہ ازیں بدھ کو پارلیمنٹ ہاؤس میں ’’اے پی پی‘‘ سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے وزیر مملکت برائے داخلہ نے کہا کہ بلوچستان گزشتہ کئی دہائیوں سے احساس محرومی کا شکار رہا، یہاں کے لوگوں کو روزگار کے مواقع کی عدم فراہمی نے ان میں ہتھیار اٹھانے کے عمل کو تقویت دی۔ شہریار خان آفریدی نے کہا ہے کہ پہاڑوں سے اتر کر آنے والے بلوچ بھائیوں کو امن اور آشتی کی زندگی میں شریک کرنا ہو گا، بارڈرز ایریا کے شہریوں کو اونرشپ کے ساتھ عزت اور احترام دینا وقت کا اہم تقاضا ہے۔انہوں نے کہا کہ سیاسی جماعتوں کے پارلیمنٹیرینز ان کے ساتھ ایک دن گزاریں، فورسز اور سویلین شہداء کے لیے ایک ایک ماہ کی تنخواہ پارلیمنٹیرینز عطیہ کریں۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ