حکومت کو سی پیک کا آڈٹ کرنے سے کچھ نہیں ملے گا، احسن اقبال

42

اسلام آباد (صباح نیوز) سابق وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی و ترقی اور ن لیگ کے رہنما احسن اقبال نے کہا ہے کہ حکومت سی پیک منصوبہ کا 200 کے بجائے2 ہزار دفعہ بھی آڈٹ کرے گی تو اس کو کچھ نہیں ملے گا لیکن اپنا وقت ضایع کرینگے۔ 10سال بعد یہ بات ضرور سامنے آئے گی کہ ہماری حکومت کے خاتمہ میں سی پیک منصوبہ پر تیزی سے کام کرنے کا جرم بھی شامل تھا۔ سی پیک 2 حکومتوں کا نہیں بلکہ یہ 2ریاستوں کے درمیان معاہدہ ہے، سی پیک منصوبہ میں پاکستانی مفادات پر کوئی سمجھوتا نہیں کیا گیا۔دونوں ملک اس منصوبے کے اسٹریٹجک پارٹنررہیں گے اور اگر ہم نے اس منصوبے میں کسی تیسرے یا چوتھے ملک کو شامل کرنا ہے تو وہ اس وقت تک نہیں ہو سکتا جب تک دونوں ممالک اس کے لیے رضامند نہ ہوں۔ ان خیالات کا اظہار احسن اقبال نے نجی ٹی وی سے انٹرویو میں کیا۔ ا نہوں نے کہا کہ بہت ساری بین الاقوامی لابیز ہیں جو اس منصوبہ کو کامیاب نہیں ہونے دینا چاہتیں۔ ا نہوں نے کہا کہ چین باربار کہہ چکا ہے کہ ہم آپ کو ایک انڈسٹریل اکانومی کی صورت میں مضبوط پارٹنر دیکھنا چاہتے ہیں،آپ کی طاقت ہماری طاقت ہو گی۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کی ذمے داری ہے کہ ہم سی پیک کو فول پروف سیکورٹی دیں۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ