33 ہزار کنال زمین واگزارکرائی ہے ‘شہریار آفریدی

50

اسلام آباد (اے پی پی) وزیر مملکت برائے داخلہ شہریار آفریدی نے کہا ہے کہ تجاوزات اور قبضہ مافیا کے خلاف آپریشن کے دوران اسلام آباد کے مضافات میں 33 ہزار کنال زمین واگزار کرائی گئی ہے‘ ماضی میں غریبوں کے خلاف کارروائی ہوتی تھی‘ بڑے مگرمچھوں پر ہاتھ نہیں ڈالا جاتا تھا‘ 100 دن میں اپنے اہداف حاصل کریں گے‘ قومی مفاد کا تحفظ کیا جائے گا‘ قومی سلامتی ہر چیز پر مقدم ہے‘ ارکان پارلیمنٹ کی عزت و توقیر کی حفاظت کریں گے‘ ان سے نامناسب سلوک کرنے والے اہلکار کے خلاف کارروائی
کرکے مثال بنا دیا جائے گا۔ جمعہ کو ایوان بالا میں سینیٹر اعظم موسیٰ خیل کے نکتہ اعتراض پر انہوں نے کہا کہ ماضی میں جب بھی قوانین بنے وہ صرف غریبوں کے لیے تھے اور یہاں پر لوگ فائلوں کو ٹائر لگانے کی باتیں کرکے اپنے مقاصد حاصل کرلیتے تھے۔ آج کی حکومت اس لحاظ سے بالکل واضح ہے‘ ہم نے 1200 کنال زمین بحریہ انکلیو میں واگزار کرائی ہے‘ 400 کنال پر رہائشی عمارات بنی ہوئی تھیں‘ وزیراعظم کا حکم ہے کہ بڑے مگرمچھوں پر پہلے ہاتھ ڈالا جائے۔ جی 12 میں 48 مارکیز بنی ہوئی تھیں۔ سنٹورس کے پاس 10 کنال کے پلاٹ پر قبضہ تھا۔ ایک سیکٹر میں 2200 ایکڑ زمین کالی بھیڑوں کی ملی بھگت سے فروخت کردی گئی اور ان پر تجاوزات بنا دی گئیں۔ انہوں نے کہا کہ میں خود موقع پر جاؤں گا‘ ارکان پارلیمنٹ کی عزت پر کوئی سمجھوتہ نہیں ہوگا۔ چیئرمین سی ڈی اے ایک ذمے دار افسر ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ارکان پارلیمنٹ کی عزت ہوگی تو ووٹرز کی عزت ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ سینیٹر اعظم موسیٰ خیل کے ساتھ مناسب رویہ اختیار کرنے والے انسپکٹر کے خلاف کارروائی ہوگی۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ