جامع ماحولیاتی پالیسی بنائی جائیگی، وزیر اعلیٰ بلوچستان

57

کوئٹہ(نمائندہ جسارت) وزیر اعلیٰ بلوچستان جام کمال خان نے بلوچستان انوائرمنٹل پروٹیکشن کونسل کا پہلا اجلاس طلب کرلیا۔جس میں ماحولیات اور موسمیاتی تبدیلی سے متعلق امور کا جائزہ لے کر صوبائی سطح پر موحولیاتی تحفظ کے حوالے سے جامع پالیسی مرتب کی جائے گی۔ وزیر اعلیٰ نے ہدایت کی کہ کونسل میں ماحولیات سے تعلق رکھنے والے اداروں کے وزرا کو بھی شامل کیا جائے ۔وزیر اعلیٰ نے کہا کہ محکمہ ماحولیات کی خالی اسامیوں پر اس شعبے کے اسپیشلائزڈامیدواروں کو ترجیح دی جائے گی ، محکمے کو محکمہ ماحولیات و موسمیاتی تبدیلی بنایا جائے گا ۔اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ نجی و سرکاری شعبے کے تمام ترقیاتی منصوبوں میں ماحولیاتی تحفظ اور موسمیاتی تبدیلوں کو مد نظر رکھنے کے لیے محکمہ ماحولیات رہنما اصول فراہم کریگا اور جو ان پر لازم ہوگی۔ سیکرٹری محکمہ ماحولیات عبدالصبور کاکڑ نے بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ محکمے کے انسپکٹرز اسپتالوں ، لیبارٹرز اور پرائیویٹ کلینکس میں فضلے کو ٹھکانے لگانے کے عمل کی نگرانی کرے ہیں،انہوں نے بتایا کہ ایسے بیگز متعارف کرائے جارہے ہیں جو 4 سے 5 ماہ میں خود بخود تلف ہوجاتے ہیں ان بیگز کی تیاری کے لیے نجی شعبوں میں 2 فیکٹریاں قائم ہیں ،ٹیسٹ رپورٹ کے بعدان بیگز کو مارکیٹ میں متعارف کرلیاجائے گا۔علاوہ ازیں وزیر اعلیٰ بلوچستان جام کمال خان سے ہنگلاج مندر کمیٹی کے وفد نے ملاقات کی انہوں نے مندرکودرپیش مسائل وزیر اعلیٰ کے سامنے رکھے،جس پر جام کمال نے اپنے مکمل تعاون کا یقین دلاتے ہوئے رکن صوبائی اسمبلی دنیش کمار کو اقلیتوں کے فوکل پرسن کی حیثیت سے کام کرنے کی ہدایت کی ۔وزیر اعلیٰ نے کہا کہ اقلیتی امور کا علیحدہ انتظامی محکمہ قائم اورملازمتوں میں اقلیتوں کے کوٹے پر عمل کیاجائے گا۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ