پانچ روز میں روئی کی قیمتوں میں400روپے فی من کی کمی 

159

چین،امریکہ اور ترکی کے درمیان اقصادی جنگ نے پاکستان سمیت دنیا بھر کی کاٹن مارکیٹس کو لپیٹ میں لے لیا

نیو یارک کاٹن ایکسچینج میں غیر معمولی مندی سامنے آنے سے پاکستان سمیت دنیا بھر میں روئی کی قیمتوں میں مندی کا رجحان

کراچی :چین،امریکہ اور ترکی کے درمیان جاری اقصادی جنگ نے پاکستان سمیت دنیا بھر کی کاٹن مارکیٹس کو اپنی لپیٹ میں لے لیا۔پاکستان میں صرف پانچ روز کے دوران روئی کی قیمتوں میں400روپے فی من کی مندی کے باعث پورے کاٹن سیکٹر میں زبردست تشویش کی لہر دوڑ گئی ہے

چیئرمین کاٹن جنرز فورم احسان الحق نے بتایا کہ چین اور ترکی امریکہ سے سالانہ تقریباً ایک کروڑ دس لاکھ بیلز کے لگ بھگ روئی درآمد کرتے تھے جو اب ان ملکوں کی جانب سے ایک دوسرے پر بھاری ڈیوٹیز کے نفاذ کے باعث معطل ہو چکی ہے جس سے نیو یارک کاٹن ایکسچینج میں غیر معمولی مندی سامنے آنے سے پاکستان سمیت دنیا بھر میں روئی کی قیمتوں میں مندی کا رجحان سامنے آیا ہے جس کے دوران سوموار کے روز کراچی کاٹن ایکسچینج(کے سی اے)میں بھی روئی کے سپاٹ ریٹ ریکارڈ250روپے مندی کے بعد سات ہزار650روپے فی من تک گر گئے ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ پچھلے چند روز کے دوران پاکستان میں روئی کی قیمتیں400روپے فی من مندی کے بعد پنجاب میں سات ہزار900 اور سندھ میں سات ہزار800روپے فی من تک گر گئی ہیں اور خدشہ ظاہر کیا جا رہا ہے کہ آئندہ چند روز کے دوران ان میں مزید مندی واقع ہو گی۔انہوں نے بتایا کہ اطلاعات کے مطابق چین نے اب بھارت سے روئی کی خریداری شروع کر دی ہے اور اب تک چین اور بھارت کے درمیان16لاکھ روئی کی بیلز کے خریداری معاہدے مکمل ہو چکے ہیں اور توقع ہے کہ مزید معاہدوں کی صورت میں بھارت میں روئی کی قیمتوں میں متوقع اضافے سے اسکے مثبت اثرات پاکستانی کاٹن مارکیٹس پر بھی مرتب ہو سکتے ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ
mm
قاضی جاوید سینئر کامرس ریپورٹر اور کامرس تجزیہ، تفتیشی، اور تجارتی و صنعتی،معاشی تبصرہ نگار کی حیثیت سے کام کرنے کا وسیع تجربہ رکھتے ہیں ۔جسارت کے علاوہ نوائے وقت میں ایوان وقت ،اور ایوان کامرس بھی کرتے رہے ہیں ۔ تکبیر،چینل5اور جرءات کراچی میں بھی کامرس رپورٹر اور ریڈیو پاکستان کراچی سے بھی تجارتی،صنعتی اور معاشی تجزیہ کر تے ہیں qazijavaid61@gmail.com