نئے حوادث۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

55

جو تھا نہیں ہے، جو ہے نہ ہوگا، یہی ہے اک حرف محرمانہ
قریب ہے نمود جس کی، اسی کا مشتاق ہے زمانہ

مری صراحی سے قطرہ قطرہ نئے حوادث ٹپک رہے ہیں
میں اپنی تسبیح روز و شب کا شمار کرتا ہوں دانہ دانہ

Print Friendly, PDF & Email
حصہ