رواں ماہ 100 سے زائد مہاجرین بحیرہ روم کی نذر ہو گئے

30

اٹلی(انٹرنیشنل ڈیسک) رواں ماہ بحیرہ روم میں گنجایش سے زیادہ تارکین وطن سے بھری ہوئی کشتیوں کے ڈوبنے سے 100 سے زائد مہاجرین ہلاک ہوگئے۔ امدادی تنظیم ایم ایس ایف کے مطابق یکم ستمبر کی صبح لیبیا کے ساحل سے 2 چھوٹی کشتیاں روانہ ہوئیں، جن پر درجنوں افراد سوار تھے۔ کشتی پر سوار افراد میں سے صرف 55 مہاجرین ہی زندہ بچ سکے، جن میں بچے بھی شامل تھے۔ زندہ بچ جانے والوں کا کہنا تھا کہ اگر امداد جلدی آ جاتی تو باقیوں کو بھی بچایا جا سکتا تھا۔ ڈوبنے والی کشتیوں پر سوڈان، مالی، کیمرون اور نائیجیریا سے تعلق رکھنے والے مہاجرین سوار تھے۔ بچ جانے والے افراد کو 2 ستمبر کو لیبیا کی کوسٹ گارڈ نے خمص کی بندرگاہ پر منتقل کیا۔ ایجنسی کے مطابق مہاجرین کو لیبیا میں مزید مظالم کا سامنا کرنا پڑے گا۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ