بھارتی فوج نے پی ایچ ڈی اسکالر سمیت مزید 3 کشمیری شہید کردیے

138

سری نگر/نئی دہلی(اے پی پی) مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج ریاستی دہشت گردی کی تازہ کارروائی کے دوران ضلع کپواڑہ میں پی ایچ ڈی اسکالر عبدالاحد گنائی سمیت 3کشمیری نوجوانوں کو شہید کردیا۔ کشمیر میڈیا سروس کے مطابق فوجیوں نے منگل کو نوجوانوں کو ضلع ہندواڑہ کے علاقے گلورہ میں تلاشی اور محاصرے کی کارروائی کے دوران شہید کیا۔ آخری اطلاعات ملنے تک علاقے میں فوجی کارروائی جاری تھی۔ ادھر قابض انتظامیہ نے نوجوانوں کے قتل کے خلاف احتجاجی مظاہروں کو روکنے کے لیے ہندواڑہ میں موبائل انٹرنیٹ سروس معطل اور تعلیمی ادارے بند کردیئے ہیں۔ دریں اثنا سرینگر کے علاقے خانیار
میں42 سالہ پی ایچ ڈی اسکالر عبدالاحد گنائی کو گولیاں مار کر شہید کردیا گیا، وہ علی گڑھ مسلم یونیورسٹی سے ڈاکٹریٹ کر رہے تھے، اپنے رشتے داروں سے ملاقات کے لیے خانیار آئے تھے۔ دوسری جانب سید علی گیلانی، میرواعظ عمر فاروق اور محمد یٰسین ملک پر مشتمل مشترکہ حریت قیادت نے بومئی سوپور میں حکیم الرحمان سلطانی کو شہید کیے جانے پر14 ستمبرکو سوپور اور زینہ گیر کے علاقوں میں مکمل ہڑتال کرنے اور نماز جمعہ کے موقع پر انہیں شاندار خراج عقیدت پیش کرنے کی اپیل کی ہے۔ کشمیرمیڈیا سروس کے مطابق آزادی پسند رہنماؤں نے حیدرپورہ سرینگر میں ایک ہنگامی اجلاس کے بعد جاری بیان میں کہا کہ قوم ایسے محسنوں اور سرفروشوں کی عظیم قربانیوں کو ہمیشہ یاد کرتی رہے گی۔ مشترکہ قیادت نے کہا کہ قابض انتظامیہ حریت پسند رہنماؤں کی پُرامن سیاسی سرگرمیوں کو معطل کرنے کے لیے قتل وغارت پر اُتر آئی ہے جسے ہرصورت میں ناکام بنایا جائے گا۔انہوں نے حکیم الرحمان سلطانی کے قتل کو بھارتی ایجنسیوں کی کارستانی قرار دیا۔ادھرنئی دہلی کی ایک عدالت نے معروف کشمیری آزادی پسند رہنما سید صلاح الدین کے دوسرے بیٹے سید شکیل کونام نہاد بھارتی تحقیقاتی ادارے این آئی کی مدت مکمل ہونے پر جوڈیشل حراست میں دے دیا ہے ۔ واضح رہے کہ بھارتی تحقیقاتی ادارے این آئی اے کی جانب سے سید شکیل کے خلاف اپریل 2011ء میں درج کیے گئے ایک جھوٹے مقدمے میں جوڈیشل حراست میں دیا گیا ہے ۔
مقبوضہ کشمیر

Print Friendly, PDF & Email
حصہ

جواب چھوڑ دیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.