العزیزیہ ریفرنس کی سماعت ملتوی کرنے کی استدعا مسترد

87

اسلام آباد (صباح نیوز) سابق وزیراعظم نواز شریف کے خلاف العزیزیہ اسٹیل ملز ریفرنس کی سماعت کے دوران نواز شریف کے وکلا نے کارروائی جمعرات 13 ستمبر تک کے لیے ملتوی کرنے کی استدعا کی، جسے احتساب عدالت نے مسترد کردیا۔احتساب عدالت نمبر 2 کے جج محمد ارشد ملک نے سابق وزیراعظم کے خلاف نیب ریفرنس کی سماعت کی۔ سماعت کے موقع پر نواز شریف کو اڈیالہ جیل سے احتساب عدالت لایا گیا۔ منگل کو سماعت کے دوران نواز شریف کے وکیل خواجہ حارث ہائی کورٹ میں مصروفیت کی وجہ سے پیش نہ ہوئے۔خواجہ حارث کے معاون وکیل شیر افگن اسدی نے عدالت سے استدعا کی کہ کارروائی کو جمعرات تک کے لیے ملتوی کردیا جائے۔معاون وکیل شیر افگن اسدی نے کہا کہ اسلام آباد ہائیکورٹ نے ایون فیلڈ ریفرنس میں نواز شریف و دیگر کی سزا معطلی کی درخواستوں پر دلائل کے لیے آج اور کل کا دن مختص کیا ہے اور دلائل کی تیاری کے باعث خواجہ حارث کل یہاں پیش نہیں ہوسکتے۔انہوں نے مزید کہا کہ اسلام آباد ہائیکورٹ میں نواز شریف کی سزا معطلی اور بریت کی درخواستوں پر روزانہ کی بنیاد پر سماعت ہوتی ہے۔ جس پر احتساب عدالت کے جج نے ریمارکس دیے کہ یہاں بھی روزانہ کی بنیاد پر ہی سماعت ہوتی ہے’۔معزز جج کا مزید کہنا تھا کہ عدالت عظمیٰنے 6 ہفتوں میں ریفرنس نمٹانے کا حکم دے رکھا ہے اور دی گئی مدت ختم ہونے میں 4 ہفتے باقی ہیں، اس موقع پر التوا نہیں دیا جاسکتا۔اس موقع پر ڈپٹی پراسیکیوٹر جنرل نیب سردار مظفر عباسی نے کہا کہ ‘ہمارے گواہ واجد ضیا آج بھی جرح کے لیے موجود ہیں’۔ احتساب عدالت کے جج نے مزید کہا کہ ہائیکورٹ میں ڈویژن بینچ دن 12 بجے سماعت کرتا ہے، خواجہ حارث صبح ساڑھے 9 بجے یہاں پیش ہو کر جرح کریں۔ ساتھ ہی جج ارشد ملک نے ریمارکس دیے، ایک طرف ہائی کورٹ کی ہدایات ہیں تو دوسری طرف عدالت عظمیٰ کی، یہ تو نہیں ہوسکتا کہ آپ کی مرضی کی سماعت ہے، صرف روزانہ کی بنیاد پر چلے۔ اس کے ساتھ ہی عدالت نے نواز شریف کے وکلا کی جانب سے جمعرات تک سماعت ملتوی کرنے کی استدعا مسترد کردی۔
استدعا مسترد

Print Friendly, PDF & Email
حصہ