وزیراعظم نے 50 لاکھ گھروں کی تعمیرات پر سفارشات 2 ہفتوں میں طلب کرلی

50

اسلام آباد (نمائندہ جسارت) پاکستان تحریک انصاف کی حکومت کی جانب سے50 لاکھ گھروں کی تعمیر کے5 سالہ منصوبے کو عملی جامہ پہنانے کے سلسلے میں وزیر اعظم عمران خان کی زیر صدارت اعلیٰ سطح کے اجلاس میں فیصلہ کیا گیا ہے کہ وزیر اعظم بذاتِ خود اس اہم پروگرام کی نگرانی کریں گے جبکہ وزیرِ اعظم نے ہاؤسنگ کمیٹی کو حتمی سفارشات آئندہ 2 ہفتوں میں پیش کرنے کی ہدایت کی ہے تاکہ پروگرام کا جلد از جلد اعلان کیا جا سکے‘ وزیراعظم کی دعوت پر مانچسٹر سے پاکستان آنے والے برطانوی پراپرٹی ٹائیکون انیل مسرت بھی اجلاس میں شریک ہوئے اور اجلاس میں کو 50 لاکھ مکانات کی تعمیر اور طریقہ کار پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ پیر کو منعقدہ اجلاس میں سیکرٹری ہاؤسنگنے وزیرِ اعظم کو ہاؤسنگ کمیٹی کی جانب سے اب تک کی پیش رفت پر تفصیلی بریفنگ دی۔ سیکرٹری ہاؤسنگ نے وزیراعظم کو ملک میں گھروں کی موجودہ صورتحال اور سالانہ طلب سے آگاہ کیا۔ 50 لاکھ گھروں کی تعمیر کے حوالے سے مطلوبہ زمین، تعمیرات کے لیے مطلوبہ وسائل کی فراہمی کے حوالے سے مختلف آپشنز اور پروگرام کو عملی جامہ پہنانے کے لیے پرائیویٹ سیکٹر اور غیر ملکی سرمایہ کاروں کو مطلوبہ سہولیات کی فراہمی کے لیے متعلقہ قوانین میں ترامیم کے حوالے سے بھی تفصیلی بریفننگ دی گئی۔ اس موقع پر وزیر اعظم نے کہا کہ50 لاکھ گھروں کی تعمیر پی ٹی آئی حکومت کے ایجنڈے کا اہم جزو ہے‘ حکومت بے گھر افراد کو گھروں کی فراہمی کے وعدے کی تکمیل کے لیے پُرعزم ہے‘ 50 لاکھ گھروں کی تعمیر سے نہ صرف ملک میں بے گھر افراد کی رہائش کا مسئلہ حل ہوگا بلکہ اس سے لاکھوں بے روز گار افراد کو نوکریاں بھی میسر آئیں گی اور ہاؤسنگ سیکٹر سے منسلک صنعتوں کو ترقی ملے گی۔ انہوں نے کہا کہ ملک کے کونے کونے میں واقع سرکاری اراضی کے علاوہ محض پنجاب اور خیبر پختونخوا کے گیسٹ ہاوسز اور دیگر سرکاری عمارتوں اور املاک کی اربوں روپے کی زمین کو برؤے کار لا کر ہاؤسنگ پروگرام کے لیے خاطر خواہ مالی وسائل اکٹھے کیے جا سکتے ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ