بیرون ملک پاکستانی ڈیمز فنڈز میں بھر پورحصہ نہیں لے سکیں گے‘ تحقیقاتی ادارہ ولسن سینٹر

52

واشنگٹن(آن لائن )میڈیا رپورٹ کے مطابق واشنگٹن کے تحقیقی ادارے ‘ولسن سینٹر’ میں ایشیا پروگرام کے ڈپٹی ڈائریکٹر مائیکل کوگلمین نے کہا کہ ’عمران خان کو امریکی معاشرے میں پاکستانیوں کی بھرپور حمایت حاصل ہے۔تاہم انہوں نے خدشے کا اظہار کیا کہ ’بیرون ملک مقیم پاکستانی اپنی معاشی صورتحال کی وجہ سے مہم میں زیادہ حصہ نہیں لے سکیں گے‘اس حوالے سے مائیکل کوگلمین کا کہنا تھا کہ کچھ لوگ سمجھتے ہیں کہ امریکا میں مقیم پاکستانی بہت امیر ہیں، لیکن حقیقت میں ان میں سے کئی ہزاروں ڈالر کا چندہ دینے کی اہلیت نہیں رکھتے۔علاوہ ازیں مائیکل کوگلمین نے پانی کے بحران سے نمٹنے کے لیے حکومتی نقطہ نظر کی حمایت کی۔ ساتھ ہی انہوں نے واضح کیا کہ بیرون ملک مقیم پاکستانیوں سے ڈیم کی تعمیر کے لیے چندہ کرنے کے بجائے تربیلا ڈیم کے موجودہ ڈھانچے کو درست کرلیا جائے تو خرچہ بھی کم ہوگا اور مشکلات بھی زیادہ نہیں ہوں گی۔انہوں نے ورجینیا میں پاکستان تحریک انصاف کے رہنما جونی بشیر کے حالیہ بیان کے حوالے سے کہا کہ ’موجودہ نہری نظام کو بہتر کرکے غیر معمولی نتائج حاصل کیے جاسکتے ہیں۔ واضح رہے کہ جونی بشیر نے کہا تھا کہ حکومت جانتی ہے کہ 12 ارب ڈالر کے چندے سے بھاشا ڈیم تعمیر نہیں کیا جاسکتا ، تاہم چندہ کے علاوہ بھی دیگر امور پر سوچا جارہا ہے، اس لیے اپنا حصہ شامل کریں اور اگر نہیں کرنا چاہتے تو دوسروں کو مت روکیں۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ