۔13 ویں صدر کی حلف برداری

75

ڈاکٹر عارف علوی نے پاکستان کے 13 ویں صدر کی حیثیت سے حلف اٹھا لیا ہے رسمی سکارروائی کے بعد انہوں نے ایوان صدر کے غیر ضروری اخراجات ختم کرنے کی ہدایت کی ہے۔ اسے اتفاق کہا جائے یا کچھ اور کہ ان کی حلف برداری کے بعد پاک فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ نے جمہوریت مستحکم ہونے کی نوید سنائی۔ اس میں کوئی ہرج بھی نہیں لیکن یہ نوید چیف جسٹس سناتے یا سابق صدر سناتے تو زیادہ اچھا ہوتا۔ بہر حال اب صدر مملکت کے طور پر قوم ڈاکٹر عارف علوی کے اقدامات کی منتظر رہے گی۔ ویسے پاکستان میں صدر مملکت کا کردار تو اب گزشتہ پانچ سال سے تو کوئی موثر کردار نہیں رہا کیونکہ ممنون حسین نے پورے پانچ سال نواز شریف کی ممنونیت میں گزارے۔ یہ بھی اچھی بات ہے کہ صدر اور وزیراعظم کے درمیان کھینچا تانی والا ماحول بھی ختم ہوگیا ہے توقع ہے کہ عارف علوی صدر پاکستان کے طور پر کچھ ایسے اقدامات بھی کریں گے جن کی وجہ سے ان کو مستقبل میں یاد رکھا جائے۔ ان کے سامنے کئی ایسے چیلنجز ہیں جو حل طلب ہیں۔ پاکستانی قوم کی بیٹی ڈاکٹر عافیہ صدیقی تو اب ایک بھولی بسری داستان بن گئی ہے۔ یوسف رضا گیلانی، آصف زرداری، میاں نواز شریف آئے اور گئے اب عافیہ کی بگرام جیل میں موجودگی کا انکشاف کرنے والے عمران خان وزیراعظم ہیں اور ان کے ساتھی ڈاکٹر عارف علوی صدر، سابق صدر ممنون حسین نے پہلا ایگزیکٹیو آرڈر عافیہ کی وطن واپسی کے بارے میں جاری کرنے کا وعدہ کیا تھا۔ غالباً انہوں نے پانچ برس میں کوئی ایگزیکٹو آرڈر ہی جاری نہیں کیا۔ اب عارف علوی صاحب کا امتحان ہے وہ عافیہ کے معاملے کو کس طرح حل کرتے ہیں۔ آیا وہ ان کی ترجیحات میں بھی ہے یا نہیں۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ