سیکورٹی اداروں کی نااہلی ‘ہاکس بے پرنہاتے ہوئے2 نوجوان ڈوب گئے

51

کراچی(اسٹاف رپورٹر)) کراچی میں ہاکس بے پر نہاتے ہوئے دو نوجوان ڈوب کر جاں بحق ہوگئے۔شہریوں نے اپنی مدد آپ کے تحت دونوں افراد کی لاشیں نکال لیں ، ہلاکتیں شہری انتظامیہ کی جانب سے سمندر میں نہانے پر پابندی کے باوجود ہوئی ہیں،دفعہ 144کے نفاذ کے باوجود کوئی سیکورٹی اہلکارساحل پرشہریوں کو روکنے کے لیے موجود نہیں۔گزشتہ ماہ 4 اگست کو بلدیہ عظمیٰ کراچی نے سمندر پرنہاتے ہوئے ہلاکتوں کے بعد ساحل سمند پر نہانے پر پابندی عائد کی تھی۔میئر کراچی سید وسیم اختر نے سمندر میں نہانے پر پابندی عائد کرتے ہوئے نہانے پر دفعہ144 نافذ کی تھی۔میئر کراچی نے کے ایم سی کے لائف گارڈز کو الرٹ رہنے کی ہدایت بھی کی تھی۔میئر کراچی نے کہا کہ حادثات میں ا ضافے کے باعث یہ پابندی لگائی جا رہی ہے۔ حادثات سے بچنے کے لیے شہری سمندر میں نہانے سے گریزکریں۔پابندی کے باوجود شہری انتظامیہ سمندر پر لائف گارڈز کھڑے نہیں کیے۔ رواں سال جون میں بھی دو نوجوان ڈوب کرجاں بحق ہوگئے تھے۔ جاں بحق ہونے والوں میں 19سالہ فراز 22سالہ اسامہ شامل تھے۔اسامہ کراچی کے علاقے نارتھ ناظم آباد کارہائشی تھا جبکہ فراز فیڈرل بی ایریاکا رہائشی تھا۔ دونوں عید کے دوسرے دن اتوارکوتفریح کی غرض سے ساحل سمندر گئے۔جاں بحق ہونے والوں میں افتخار اورجمال شامل ہیں جو جیل روڈ پی آئی بی کے رہائشی تھے اوردوستوں کے ہمراہ پکنک منانے آئے تھے۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ