بجلی اور گیس کی قیمتیں بڑھانے سے متوسط اور نچلا طبقہ متاثر ہوگا

51

سکھر (نمائندہ جسارت) آل پاکستان آرگنائزیشن آف اسمال ٹریڈرز اینڈ کاٹیج انڈسٹریز کے چیئرمین حاجی محمد ہارون میمن نے کہا ہے کہ حکومت نے گیس کی قیمت میں 46 فیصد اضافے کی منظوری دے کر اپنے ہی انتخابی منشور کی نفی کردی ہے مہنگائی کم کرنے کے دعوے اور اعلانات کرنے والوں نے عوام پر مہنگائی کے پہاڑ توڑ دیئے ہیں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے اپنے دفتر میں تاجروں اور شہریوں کے وفود سے بات چیت کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ اس سے قبل بجلی کی قیمت میں 36 پیسے کا اضافہ کیا گیا اور اب گیس کی قیمت میں 46 فیصد اضافہ کرکے عوامی توقعات کے برعکس اقدامات کیے جارہے ہیں۔ بجلی اور گیس کی قیمتیں بڑھانے سے زیادہ تر متوسط اور نچلا طبقہ متاثر ہوگا پہلے سے ہی بڑھی ہوئی مہنگائی میں مزید اضافہ ہوجائے گا جس سے غریب لوگوں کی مشکلات بڑھ جائیں گی۔ انہوں نے کہا کہ غریب عوام پہلے ہی مہنگائی کی چکی میں پس رہے ہیں ان پر مہنگائی کا مزید بوجھ ڈالنا ناقابل فہم ہے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت نے اقتدار میں آنے سے قبل عوامی مشکلات کم کرنے اور انہیں سہولتیں فراہم کرنے کے بلند و بانگ دعوے کیے اور بڑے بڑے اعلانات کیے مگر حکومت سنبھالتے ہی غریب عوام پر مہنگائی کا اضافی بوجھ ڈالا جارہا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ گیس کی قیمتیں بڑھانے سے صنعتی پیداوار متاثر ہوگی اور روز مرہ استعمال ہونے والی اشیاء کی قیمتیں بھی بڑھ جائیں گی جس سے براہ راست غریب عوام متاثر ہوں گے۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ وزیراعظم فوری طور پر بجلی اور گیس کی قیمتوں میں کیے گئے اضافے کو واپس لیں۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ