امریکا مذاکرات کیلیے پیغامات بھیجتا رہتا ہے، ایران

103
تہران: ایرانی صدر حسن روحانی قوم سے خطاب کررہے ہیں
تہران: ایرانی صدر حسن روحانی قوم سے خطاب کررہے ہیں

تہران (انٹرنیشنل ڈیسک) ایرانی صدر حسن روحانی نے کہا ہے کہ امریکا مذاکرات شروع کرنے کے لیے مسلسل پیغامات بھیجتا رہا ہے۔ انہوں نے یہ بات ہفتے کے روز سرکاری ٹیلی وژن پر نشر ہونے والے ایک خطاب میں کہی۔ ایرانی صدر حسن روحانی نے کہا ہے کہ امریکی حکومت معاشی پابندیوں کی صورت میں ایران پر مسلسل دباؤ بڑھانے کا سلسلہ جاری رکھے ہوئے ہے، تو دوسری جانب وہ تہران حکومت کو مذاکرات پر راضی کرنے کے لیے مسلسل پیغامات ارسال کرتی رہتی ہے۔ روحانی نے ان پابندیوں کے سبب معاشی مشکلات کا مقابلہ کرنے کے لیے اپنی عوام کو متحد رہنے کی اپیل کی۔ انہوں نے کہا کہ آج حکومت سب سے آگے ہے۔ یہ ایک معاشی، نفسیاتی اور پراپیگنڈا جنگ ہے۔ اپنے خطاب میں انہوں نے کہا کہ ہر روز وہ ہمیں مختلف طریقوں سے پیغامات بھیجتے رہتے ہیں کہ آئیے مذاکرات کریں۔ روحانی کا مزید کہنا تھا کہ ایرانی عوام امریکا کی معاشی جنگ کے آگے سر نہیں جھکائیں گے۔ ان کا اشارہ ان پابندیوں کی جانب تھا جو امریکا کی طرف سے جوہری معاہدے سے الگ ہوجانے کے نتیجے کے طور پر تہران حکومت پر عائد کی گئی ہیں۔ ایران اور مغربی طاقتوں کے درمیان 2015ء میں طے پانے والے جوہری معاہدے سے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے رواں برس مئی میں الگ ہونے کا اعلان کیا تھا۔ ٹرمپ کا کہنا تھا کہ واشنگٹن کو ایران کے میزائل پروگرام اور خطے میں اپنا اثر و رسوخ بڑھانے کی کوششوں پر شدید تحفظات ہیں۔ واشنگٹن کی طرف سے تہران حکومت کے خلاف پابندیوں کے سبب ایرانی ریال کی قدر مسلسل گر رہی ہے اور اس باعث افراط زر غیرمعمولی طور پر بلند ہو چکی ہے۔ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ یہ کہہ چکے ہیں کہ وہ ایرانی قیادت سے ملاقات کرنا چاہتے ہیں، لیکن تہران حکومت نے ایسی کسی ملاقات کو خارج از امکان قرار دیا ہے۔ ایرانی صدر حسن روحانی کا اپنے خطاب میں کہنا تھا کہ ایک طرف وہ ایرانی عوام کو دبانے کی کوشش کرتے ہیں، تو دوسری جانب وہ ہمیں ہر روز مختلف ذرائع سے بات چیت کے پیغامات روانہ کرتے ہیں۔
امریکا/ ایران/ پیغامات

Print Friendly, PDF & Email
حصہ