مقبوضہ کشمیر : بھارتی فوجی کی خود کشی، تعداد 406 ہوگئی

68

جموں (اے پی پی)مقبوضہ کشمیر میں جموں خطے کے ضلع سامبا میں بھارتی فوج کے ایک اہلکار نائیک جسویر سنگھ نامی اہلکار نے ضلع کے علاقے مہیشور میں اپنے کیمپ میں اپنی سروس رائفل سے خود کشی کی۔ جنوری 2007سے مقبوضہ علاقے میں خود کشی کرنے والے بھارتی فوجیوں او رپولیس اہلکاروں کی تعداد بڑھ کر 4سو 6ہو گئی۔ مزید برآں بدنام زمانہ بھارتی تحقیقاتی ادارے ’ نیشنل انویسٹی گیشن ایجنسی‘ کی ایک خصوصی عدالت نے مقبوضہ کشمیر میں غیر قانونی بھارتی قبضے کے خلاف برسر جدوجہد آزادی پسند تنظیم دختران ملت کی سربراہ آسیہ اندرابی اور ان کی 2 ساتھیوں ناہیدہ نسرین اور فہمیدہ صوفی کے عدالتی ریمانڈ میں یکم اکتوبر تک توسیع کر دی ہے۔ وہ آج کل نئی دہلی کی تہاڑ جیل میں نظر بند ہیں۔دوسری طرف بھارتی فوجیوں نے ضلع اسلام آبادکے علاقے اچھہ بل رینی پورہ میں محاصرے کے دوران ایک نوجوان کوشہید کیا۔ دریں اثنا نامعلوم افراد میں ہفتے روز سرینگر کے علاقے نسیم باغ میں ایک اور طالب علم کو گولی مارکر شہید کردیا۔ طالب علم کی شناخت اشفاق احمدکے طورپر ہوئی ہے اوروہ اسلامک یونیورسٹی آف سائنس اینڈ ٹیکنالوجی اونتی پورہ کا طالب تھا۔ علاو ہ ازیں بھارتی فورسز کے ہاتھوں شہید ہونے والے نوجوان بلال احمد کی نماز جنازہ ان کے آبائی علاقے تانترے پورہ یاری پورہ میں ادا کی گئی ۔ لوگوں کی بڑی تعداد میں آمد کی وجہ سے نماز جنازہ 3 دفعہ ادا کی گئی۔ نوجوان کو آزادی کے حق میں بھارت کے خلاف فلک شگاف نعروں کی گونج میں سپرد خاک کیاگیا۔نامعلوم مسلح افراد نے ضلع بارہمولہ کے علاقے سوپور میں کل جماعتی حریت کانفرنس کے ایک کارکن حکیم الرحمن سلطانی نامی کارکن کو سوپور کے علاقے ریشی پورہ میں اپنے گھر کے باہر گولیاں ماری گئیں،وہ اسپتال منتقلی کے دوران دم توڑ گئے۔دوسری طرف ضلع شوپیاں میں 6 نوجوانوں پر کالاقانون پبلک سیفٹی ایکٹ (پی ایس اے) لاگو کر دیاجس کے بعد انہیں جموں خطے کی کوٹ بھلوال جیل میں منتقل کیا گیا۔ بھارتی پولیس نے محمد لطیف ڈار ، محمد حسین وگے ، غلام جیلانی گھوتہ ، بلال احمد بٹ ،فیصل امین میر اور شکیل احمد ٹھوکرکو بھارت مخالف مظاہروں کے دوران قابض بھارتی فورسز پر پتھراؤ کی پاداش میں گرفتار کیا تھا۔ حریت رہنماسید علی گیلانی، میرواعظ ڈاکٹر محمد عمر فاروق اور محمد یٰسین ملک نے نوجوانوں خاص طورپر طالبعلموں کے بھارتی فوج کے ہاتھوں مسلسل قتل عام کی شدید مذمت کی ہے۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ