حکومت توہین آمیز خاکوں کی اشاعت کا فوری نوٹس لے،میاں اسلم

56

اسلام آباد(نمائندہ جسارت) نائب امیر جماعت اسلامی پاکستان میاں محمد اسلم نے کہاہے کہ حکومت پاکستان توہین آمیز خاکوں کی اشاعت کا فوری نوٹس لے، اگر ہالینڈ خاکے بنانے والوں کو روکنے کے لیے سنجیدہ اقدام نہ اٹھائے تو پاکستان عالمی برادری کے ساتھ مل کر اس کے ساتھ سفارتی تعلقات پر نظر ثانی کرے۔ ہمیں ان ممالک سے تعلقات کی کوئی ضرورت نہیں جو سرکاری سرپرستی میں خاتم النبین ؐ کی توہین کے لیے خاکوں کے مقابلے کروا رہے ہیں ۔ اسلامی ممالک متحد ہو کر توہین آمیز خاکوں کے خلاف مشترکہ لائحہ عمل اختیار کریں۔ ان خیالات کااظہار انہوں نے مختلف یونین کونسلوں کے دورے کے موقع پرارکان ،کارکنان اور شہر یوں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا ۔ اس موقع پر امیر جماعت اسلامی اسلام آباد نصراللہ رندھاوا بھی مو جو د تھے ۔ میاں محمد اسلم نے کہاکہ ہالینڈ میں توہین آمیز خاکوں کے مقابلے اور اشاعت کی خبریں عالم اسلام کے لیے ایک بہت بڑا چیلنج ہے ۔ ایک طرف دنیا بھر کے ڈیڑھ ارب سے زائد مسلمانوں کی عقیدے و محبت کے مرکز پررکیک حملے کیے جارہے ہیں اور دوسری طرف پاکستان سمیت عالم اسلام کے حکمران مجرمانہ خاموشی اختیار کیے بیٹھے ہیں ۔ حکومت پاکستان ہالینڈکے سفیر کو ملک بدر کرے اور پاکستانی سفیر کو واپس بلائے۔نصراللہ رندھا وانے کہاکہ تمام مسلمان ممالک اقوام متحدہ میں مشترکہ طور پر ایک قرار داد پیش کریں جس میں حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم اور تمام انبیائے کرام ؑ کی ناموس کے تحفظ کے لیے قانون بنانے کا مطالبہ کیا جائے ۔انہوں نے کہاکہ توہین آمیز خاکوں کو کوئی مسلمان بھی برداشت نہیں کر سکتا ۔ اگر پھر بھی خاکے بنانے والے حقیقی دہشتگرد باز نہ آئیں تو پوری اسلامی دنیا کو ہالینڈ کی مصنوعات اور ہالینڈ کے ساتھ تجارت کا بائیکاٹ کردینا چاہیے۔ جب تک خاکے بنانے والے ان ممالک کا مکمل بائیکاٹ نہیں کیا جاتا ، یہ لوگ اپنے شیطانی ایجنڈے سے باز نہیں آئیں گے ۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ