مصیبت میں حواس قائم ہوں توکامیابی یقینی ہے،امین عطاری

17

کراچی (اسٹاف رپورٹر ) دعوت اسلامی کی مرکزی مجلس شوریٰ کے رکن و نگران باب المدینہ کراچی حاجی محمد امین عطاری نے کہا ہے کہ انسان کی زندگی دکھ سکھ کا مجموعہ ہے ،انسان کبھی خوشی سے نہال تو کبھی پریشانی سے بد حال ہوتا ہے مگر یہ حقیقت ہے کہ نہ خوشی ہمیشہ رہتی ہے نہ پریشانی،آخری وجہ کیا ہے کہ انسان اکثر پریشانی میں اپنے ہوش وحواس کھو بیٹھتا ہے،پریشان انسان اس بات پر غور نہیں کرتا کہ ماضی میں اس پر کتنی پریشانیاں آئی ہونگی مگر اللہ کی رحمت سے وہ دورہوچکی ہوں گی۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے عالمی مدنی مرکز فیضان مدینہ میں اجتماع سے بیان کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ اگر انسان کے
اندر حوصلہ ہوتو بہت سارے معاملات کا سامنا کرلیتا ہے،زندگی میں تبدیلیاں رونما ہوتی رہتی ہیں ،پریشانی کا وقت گزر جاتا ہے مگر ہمارا نامناسب رویہ بہت سے لوگوں کو پریشانی میں مبتلا کردیتا ہے ، بسا اوقات نامناسب رویہ اختیار کرنے والے کو شرمندگی کا سامنا کرنا پڑتا ہے ۔حاجی امین عطاری نے کہا کہ پریشانی کے وقت اگر حواس قائم رہیں گے تو کام انجام پاجائیں گے ،اگر کوئی مصیبت یا پریشانی آتی ہے تو اس کا ایک حل صبر ہے،مشکل ترین حالت میں صبر کرنا آجائے تو مسئلہ بھی حل ہوجائیگا اور ہمیں ثواب بھی ملے گا ۔ انہوں نے کہا کہ ہم پر جو پریشانی آتی ہیں اس میں اللہ کی کیا حکمت ہے بعض اوقات وہ ہماری عقل میں نہیں آتی ،رب تعالیٰ اپنے بندوں کو مصیبت میں مبتلا کرکے انہیں آزماتا ہے اگر وہ صبر کرتے ہیں تو انہیں اجر سے نوازتا ہے اور درجات کو بلند فرماتا ہے لہٰذا جو پریشانی ہم پر آتی ہیں وہ ہماری بہتر ی کیلئے آتی ہیں اگرچہ ہمیں اس کی حکمت معلوم نہ ہوتو۔حاجی امین عطاری نے کہا کہ اللہ تعالیٰ جس کیساتھ بھلا ئی کا ارادہ فرماتا ہے تو اسے مصیبت میں مبتلا فرمادیتا ہے ،مومن خوشحالی پر شکر کرتا ہے اور جب مصیبت آتی ہے تو صبر کرتا ہے لہٰذا اس کا تمام معاملہ بھلائی پر مشتمل ہوتا ہے جو اللہ کی رضا پر راضی رہتا ہے اس کو برکت بھی ملتی ہے اور اس کی زندگی پرسکون گزرتی ہے۔
امین عطاری

Print Friendly, PDF & Email
حصہ

جواب چھوڑ دیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.