یمن: اسکول وین فضائی حملے کی زد میں آگئی ، 43 شہید

188
صعدہ: عرب اتحاد کی بم باری کے نتیجے میں تباہ ہونے والی دکانوں سے شعلے اور دھواں بلند ہورہا ہے‘ زخمی بچوں کو طبی امداد فراہم کی جارہی ہے
صعدہ: عرب اتحاد کی بم باری کے نتیجے میں تباہ ہونے والی دکانوں سے شعلے اور دھواں بلند ہورہا ہے‘ زخمی بچوں کو طبی امداد فراہم کی جارہی ہے

صنعا (انٹرنیشنل ڈیسک) یمن میں سعودی اتحاد ی افواج کے فضائی حملے میں 43افراد جاں بحق ہوگئے۔ خبررساں اداروں کے مطابق جمعرات کے روز شمال مغربی صوبے صعدہ میں ایک مصروف بازار میں حوثیوں کے ٹھکانے کو حملے کا نشانہ بنایا گیا، تاہم وہاں سے گزرنے والی ایک اسکول بس بمباری کی زد میں آگئی۔ عالمی امدادی تنظیم ریڈ کراس کا کہنا ہے کہ ہلاک ہونے والوں میں اکثریت 10سال سے کم عمر بچوں کی ہے۔یمنی فوجی ذرائع کا اصرار ہے کہ حملے کا مقصد شہریوں کو نشانہ بنانا نہیں تھا، تاہم انسانی حقوق کے نگراں اداروں نے الزام لگایا کہ عرب اتحاد کی جانب سے بازاروں، اسکولوں، اسپتالوں اور رہایشی علاقوں کو نشانہ بنایا جارہا ہے۔ دوسری جانب حوثیوں کو سپورٹ کرنے والے یمنی ٹی وی چینل مسیرہ نے دعویٰ کیا ہے کہ حملے میں 47شہری جاں بحق اور77شدید زخمی ہوئے۔ ٹی وی چینل کی جانب سے پیش کی جانے والی تصاویر میں دیکھا جاسکتا ہے کہ جاں بحق ہونے والوں میں اکثریت کم عمر بچوں کی ہے۔ سعودی خبررساں اداروں کے مطابق کارروائی سعودی شہر جازاں پر میزائل حملے کے ذمے داروں کے خلاف کی گئی اور عرب اتحاد اس حملے میں حق بجانب ہے۔ حوثی باغیوں کی جانب سے بدھ کی شام سعودی عرب پر میزائل داغا گیا تھا، جسے سعودی ائر ڈیفنس سسٹم نے فضا میں ہی تباہ کردیا تھا۔ سعودی فوج کے ایک ذریعے کے مطابق فوج نے یمن سے جازان میں داغا گیا بیلسٹک میزائل مار گرایا۔ اس واقعے میں کسی قسم کے جانی نقصان کی کوئی اطلاع نہیں ملی۔ اس سے قبل پیر کی شب حوثی باغیوں کی طرف سے سعودی عرب کے سرحدی شہر نجران میں بیلسٹک میزائل داغا گیا تھا، جسے ہدف تک پہنچنے سے قبل ہی فضا میں تباہ کردیا گیا تھا۔ واضح رہے کہ گزشتہ جمعرات کو حدیدہ کی معروف مچھلی منڈی اور ایک اسپتال پر کیے گئے حملے میں 55عام شہری مارے گئے تھے۔
یمن/ فضائی حملہ

Print Friendly, PDF & Email
حصہ