ناشائستہ زبان کا استعمال:عمران خان،پرویزخٹک،ایاز صادق اور فضل الرحمان کی غیر مشروط معافی قبول

136

الیکشن کمیشن نے غیر اخلاقی زبان استعمال کرنے سے متعلق کیس میں عمران خان ،سردار ایاز صادق اور پرویز خٹک کی غیر مشروط معافی قبول کر لی جبکہ تینوں کو وارننگ دیتے ہوئے ہدایت کی کہ آئندہ ایسی زبان برداشت نہیں کی جائے گی۔

الیکشن کمیشن میں عمران خان،سردار ایاز صادق ،پرویز خٹک اور مولانا فضل الرحمن کی جانب سے غیر اخلاقی زبان کے استعمال سے متعلق کیس کی سماعت چیف الیکشن کمشنر کی سربراہی میں چار رکنی بینچ نے کی،عمران خان کے وکیل بابر اعوان نے اپنا جواب کرایا جس میں الیکشن کمیشن سے معافی مانگ لی گئی۔

ایاز صادق کے وکیل نے کہا کہ جب بندہ تقریر کر رہا ہوتا ہے تو تھوڑی بہت غلطی ہو جاتی ہے،میں معافی مانگنا چاہتا ہوں،انہوں نے یہ جان بوجھ کر نہیں بولا، ممبر کے پی کے نے کہا کہ وہ خود نہیں آئے۔وکیل نے کہا کہ آپ کہیں تو میں بلوا لیتا ہوں انہوں نے اڈیالہ جانا تھا۔چیف الیکشن کمشنر نے کہا کہ ایک اور تقریر میں وہ ہمیں دکھا رہے تھے کہ ہماری اتنی اوقات نہیں ہے جتنے ہمیں اختیارات دیئے گئے ہیں۔

سماعت کے دوران پرویز خٹک اور ان کے وکیل بھی پیش ہوئے جبکہ سماعت کے دوران پرویز خٹک کی جانب سے میڈیا پر اپنے بیان کی معافی مانگنے کا کلپ بھی چلا یا گیا،سماعت کے دوران مولانا فضل الرحمن کے وکیل بھی پیش ہوئے الیکشن کمیشن نے تینوں کیسزپر فیصلہ محفوظ کرلیا۔

بعد ازاں الیکشن کمیشن نے غیر اخلاقی زبان استعمال کرنے سے متعلق کیس میں عمران خان ،سردار ایاز صادق اور پرویز خٹک کی غیر مشروط معافی قبول کر لی جبکہ تینوں کو وارننگ دیتے ہوئے ہدایت کی کہ آئندہ ایسی زبان برداشت نہیں کی جائے گی ،الیکشن کمیشن نے ایاز صادق اور پرویز خٹک کی کامیابی کے نوٹیفکیشن کو باضابطہ قرار دے دیا۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ