بازار حصص میں مندی ، سرمایہ کاروں کو 123 ارب کا خسارہ

35

کراچی (اسٹاف رپورٹر )کاروباری ہفتہ کے پہلے دن پاکستان اسٹاک مارکیٹ بدترین مندی کی لپیٹ میں آ گئی ،ٹریڈنگ کے دوران کے ایس ای100انڈیکس 700پوائنٹس گھٹ گیا جس کی وجہ سے انڈیکس 41ہزار پوائنٹس کی نفسیاتی حد سے گر گیا اور40ہزار پوائنٹس کی کم سطح پر بند ہوا ۔ مندی کے سبب مارکیٹ میں سرمایہ کاروں کو 123ارب روپے کا خسارہ ہوا اور سرمائے کا مجموعی حجم 84کھرب روپے سے گھٹ کر 83کھرب روپے رہ گیا ۔پاکستان اسٹاک مارکیٹ پیر کو کاروبار کے آغاز سے ہی مندی کی زد میں آ گئی،عام انتخابات کے حوالے سے مختلف قیاس آرائیوں کی وجہ سے سرمایہ کاروں نے مارکیٹ کے آغاز سے ہی فروخت کو ترجیح دی جس کی وجہ سے نہ صرف ٹریڈنگ ویلیو کم رہا بلکہ ٹرن اوور بھی گذشتہ جمعہ کی نسبت12کروڑ روپے کم ہوا ۔اسٹاک تجزیہ کاروں کے مطابق الیکشن کے قریب آتے ہی سیاسی درجہ حرارت بڑھنے سے مقامی اور غیر ملکی سرمایہ کاروں میں تذبذب کی لہر دوڑ گئی ہے اور انہوں نے نئی سرمایہ کاری سے ہاتھ کھینچ لیا ہے نئے سرمائے کا سلسلہ رکنے سے مارکیٹ تنزلی کا شکار دکھائی دے رہے ہیں جس کی وجہ سے قوی امکان ہے کہ منگل کے روز بھی مارکیٹ میں مندی کے بادل چھائے رہیں گے ۔پیر کو مندی کے سبب کے ایس ای100انڈیکس 41200 ،41100 ،41000 ،40900 ،40800 ،40700 ، 40600اور40500پوائنٹس کی 8نفسیاتی حد سے گر کر 40400پوائنٹس کی کم ترین سطح پر بند ہوا ۔پاکستان اسٹاک مارکیٹ میں پیر کو کاروبار کے اختتام پر کے ایس ای100انڈیکس میں757.77پوائنٹس کی کمی ریکارڈ کی گئی جس سے انڈیکس41221.75پوائنٹس سے کم ہو کر40463.98پوائنٹس ہو گیا اسی طرح 425.40 پوائنٹس کی کمی سے کے ایس ای 30 انڈیکس 19972.95پوائنٹس اور کے ایس ای آل شیئرز انڈیکس29947.01پوائنٹس سے گھٹ کر 29513.28پوائنٹس ہو گیا ۔کاروباری مندی کے سبب مارکیٹ کے سرمائے میں1کھرب23ارب 40کروڑ5لاکھ74ہزار791روپے کی کمی ریکارڈ کی گئی جس کے نتیجے میں سرمائے کا مجموعی حجم84کھرب 76ارب21کروڑ4لاکھ33ہزار981روپے سے کم ہو کر 83 کھرب 52 ارب 80 کروڑ 98 لاکھ 59 ہزار190روپے ہو گیا ۔
پاکستان اسٹاک مارکیٹ میں پیر کو5ارب روپے مالیت کے 10کروڑ89لاکھ 99ہزار حصص کے سودے ہوئے جبکہ جمعہ کو8ارب روپے مالیت کے 22کروڑ26لاکھ 75ہزار حصص کے سودے ہوئے تھے۔پاکستان اسٹاک مارکیٹ میں پیر کو مجموعی طور پر 322کمپنیوں کا کاروبار ہوا جس میں سے 69کمپنیوں کے حصص کی قیمتوں میں اضافہ ،237میں کمی اور 16کمپنیوں کے حصص کی قیمتوں میں استحکام رہا ۔کاروبار کے لحاظ سے پاک انٹر نیشنل بلک 1کروڑ8لاکھ ،کے الیکٹرک لمیٹڈ 76لاکھ16ہزار ،لوٹے کیمیکل 54لاکھ1ہزار ،بینک آف پنجاب 48لاکھ87ہزار اور ڈی جی کے سیمنٹ 45لاکھ4ہزار حصص کے سودوں سے سرفہرست رہے ۔قیمتوں میں تیزی کے اعتبار سے رفحان معیظ کے حصص کی قیمت میں378.10روپے کا اضافہ ریکارڈ کیا گیا جس فی حصص کی قیمت بڑھ کر7940.00روپے ہو گئی اسی طرح115.00روپے کے اضافے سے فلپ مورس پاک کے حصص کی قیمت2415.00روپے ہو گئی جبکہ یونی لیور فوڈز اورنیسلے پاکستان کے حصص کی قیمتوں میں بالترتیب404.99روپے اور380.95روپے کی کمی ریکارڈ کی گئی جس کے بعد یونی یور فوڈز کے حصص کی قیمت کم ہو کر7695.00روپے اور نیسلے پاکستان کے حصص کی قیمت کم ہوکر380.95روپے ہو گئی۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ