تاجر برادری بے روزگار ی کے خاتمے میں کلیدی کردار ادا کر رہی ہے ، امجد جاوید سلیمی

47
صدر کاٹی طارق ملک اور سینیٹر عبدالحسیب خان آئی جی سندھ امجد جاوید سلیمی کو کاٹی کی شیلڈ پیش کررہے ہیں
صدر کاٹی طارق ملک اور سینیٹر عبدالحسیب خان آئی جی سندھ امجد جاوید سلیمی کو کاٹی کی شیلڈ پیش کررہے ہیں

کراچی( اسٹاف رپورٹر ) آئی جی سندھ امجد جاوید سلیمی نے کہا ہے کہ بے روزگاری کے خاتمے میں بزنس کمیونٹی کلیدی کردار ادا کرسکتی ہے، شہر میں اسٹریٹ کی شرح کم ہوئی ہے، انتخابات کی سیکورٹی کے لیے منصوبہ بندی کرچکے ہیں، گزشتہ ایک ماہ میں متعدد جرائم پیشہ گروہ گرفتار کیے ہیں، گینگز کی فہرست تیار کررہے ہیں مفرور افراد کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی۔ وہ کورنگی ایسوسی ایشن آف ٹریڈ اینڈانڈسٹری(کاٹی) کی تقریب سے خطاب کررہے تھے۔ اس موقع پر کاٹی کے صدر طارق ملک، سینئر نائب صدر سلمان اسلم، نائب صدر جنید نقی، سینیٹر عبدالحسیب خان، زبیر چھایا اور دیگر نے بھی اظہار خیال کیا۔ تفصیلات کے مطابق کاٹی کے صدر طارق ملک نے کاٹی آمد پر آئی جی سندھ کا خیر مقدم کیا اور انھیں کورنگی صنعتی علاقے سے متعلق بریفنگ دی۔ انہوں نے کہا کہ کراچی میں قیام امن کے لیے سندھ پولیس کی خدمات اور قربانیاں ناقابل فراموش ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ شہر سے بڑے جرائم کا خاتمہ ہوچکا ہے جب کہ اسٹریٹ کرائم کی بیخ کُنی کے لیے مزید اقدامات کی ضرورت ہے۔ سی ای او کائٹ ڈی ایم سی زبیر چھایا کا کہنا تھا صنعتی علاقوں میں آنے والے غیر ملکی مہمانوں کی سیکورٹی پر خصوصی توجہ کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ مہران ٹاؤن اب نو گو ایریا نہیں رہا لیکن وہاں زمینوں پر قبضے کے مسائل حل طلب ہیں جس کے لیے فوری اقدامات کی ضرورت ہے۔ سینیٹر عبدالحسیب خان، سلمان اسلم، جنید نقی نے بھی قانون کے نفاذ کے لیے سندھ پولیس کی خدمات کو سراہا۔ بعدازاں اکرم جاوید سلیمی نے کراچی میں قیام امن اور انتخابات کے پُرامن انعقاد سے متعلق اقدامات کے بارے میں صنعت کاروتاجر برداری کے تفصیلات سے آگاہ کیا۔ ان کا کہنا تھا کہ بڑھتی ہوئی بے روزگاری اسٹریٹ کرائم کا سبب ہے۔
، بزنس کمیونٹی بے روزگاری کے خاتمے میں کلیدی کردار ادا کرتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ جرائم کی روک تھام کے لیے جرائم پیشہ عناصر کا سراغ لگانے کی حکمت عملی پر کار بند ہیں، گزشتہ ایک ماہ میں کئی گروہ گرفتار کیے گئے ہیں، مفرور افراد کی فہرست تیار کرلی گئی ہے، انھیں جلد قانون کی گرفت میں لایا جائے گا۔ ایک سوال کے جواب میں انھوں نے کہا انتخابات کے لیے سندھ میں ایک لاکھ اہل کار تعینات کیے جارہے ہیں، ہر پانچ پولنگ اسٹیشن پر ایک موٹر سائیکل اور دس پر موبائل وین گشت کے لیے متعین کی جائی گی۔ ان کا کہنا تھا کہ اس بار سیاسی قیادت اور عوام نے ضابطہ اخلاق کی مثالی پابندی کرنے کا مظاہرہ کیا ہے۔ انہوں نے مزید بتایا کہ کسی بھی ہنگامی صورت حال سے نمٹنے کے لیے تمام قانون نافذ کرنے والے اداروں کی کوآرڈینیشن سے ریپڈ رسپانس فورس بھی تیار کی گئی ہے، جو انتخابات کے دوران کسی بھی ناخوشگوار واقع سے نمٹنے کے لیے الرٹ رہے گی۔ اس موقع پر پولیس کے سینئر حکام ، ڈی آئی جی سی آئی اے امین یوسفزئی، ڈی آئی جی ایسٹ عامر فاروقی اور تاجر و صنعت کار برادری کی بڑی تعداد بھی موجود تھی۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ