عدلیہ کمزور پڑگئی تو ملکی بقا خطرے میں پڑ جائے گی،جسٹس شوکت سے انصاف ہوگا،چیف جسٹس

165
لاہور :چیف جسٹس ثاقب نثار جسٹس فخرالنسا کی کتاب کی رونمائی کی تقریب سے خطاب کر رہے ہیں 
لاہور :چیف جسٹس ثاقب نثار جسٹس فخرالنسا کی کتاب کی رونمائی کی تقریب سے خطاب کر رہے ہیں 

لاہور (نمائندہ جسارت) چیف جسٹس پاکستان میاں ثاقب نثار نے کہا ہے کہ عدلیہ کمزور پڑگئی تو ملکی بقا خطرے میں پڑجائے گی، عام سائل کی طرح جسٹس شوکت عزیز صدیقی کے ساتھ بھی انصاف ہوگا۔چیف جسٹس نے عدالت عظمیٰ لاہور رجسٹری میں جسٹس شوکت صدیقی کے خلاف کارروائی کرنے اور از خود نوٹس لینے کے لیے دائر درخواست کی سماعت کی۔ چیف جسٹس نے باآواز بلند آئین پاکستان سے اپنے حلف کو پڑھا اور پھر کہا کہ کسی کے ساتھ ناانصافی نہیں ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ جسٹس شوکت صدیقی کے معاملے پر پہلے ہی نوٹس لیا جا چکا ہے اب ازخود نوٹس نہیں لیا جا سکتا ،اگر پٹیشن دائر کرنا چاہیں تو کر سکتے ہیں،چیف جسٹس نے کہا کہ ملک کے خلاف کچھ نہیں ہو رہا، جب تک یہ طاقتور عدلیہ موجود ہے ملک پر اللہ کا فضل رہے گا، جس پر درخواست گزار نے درخواست واپس لے لی۔علاوہ ازیں لاہور میں جسٹس (ر) فخر النساء کھوکھر کی کتا ب کی تقریب رونمائی سے خطاب کرتے ہوئے چیف جسٹس ثاقب نثار نے کہا کہ ہمارے ادارے کو بدنام کرنے کی کوشش کی جارہی ہے، الزامات لگائے جارہے ہیں ‘ عدلیہ کی ناکامی ملک کے لیے المناک دن ہوگا ،ججز جمہوریت کا علم بلند رکھیں گے اورآئین کی حفاظت کریں گے ۔ان کا کہنا تھا کہ آپ سے وعدہ کیا تھا الیکشن ہوں گے اور بروقت ہوں گے ، جب تک عدالت عظمیٰ ہے جمہوریت پر آنچ نہیں آنے دوں گا۔انہوں نے کہا کہ یہاں بچوں کا دودھ بھی خالص نہیں مل رہا تھا،اس لیے مجھے آئین کے مطابق بنیادی حقوق کی خاطر ایکشن لینے پڑے حالانکہ میرے دوست جانتے ہیں کہ میں مداخلت پسند نہیں کرتا،خلا ہونے کی وجہ سے جوڈیشل ایکٹوازم کی طرف آنا پڑا ، مجھ میں تکبر نام کی کوئی چیز نہیں اور میں نے زندگی میں کبھی جھوٹ نہیں بولا ،ہمیشہ کوشش کی کہ انصاف ہوتا ہوا نظر آئے ۔ چیف جسٹس کے بقول سازش کے تحت ملک میں ڈیمز نہیں بننے دیے گئے ‘ ہماری 15دن کی کوشش سے دیامربھاشا اور مہمند ڈیم کی تعمیر کا اعلان ہوا، میں اس سلسلے میں چین کے ماہرین سے بھی ملا ہوں ۔ انہوں نے کہا کہ اللہ ہمیں اچھا حکمران نصیب فرما دے جو عمرفار وق ثانی ثابت اور قوم کو مشکلات سے چھٹکارہ نصیب فرمائے اور ہمیں جوڈیشل ایکٹوازم کی طرف نہ آنا پڑے۔ چیف جسٹس نے یہ بھی کہا کہ بلوچستان ہائیکورٹ کی اگلی چیف جسٹس طاہرہ صفدر ہوں گی اور پاکستان کی تاریخ میں پہلی مرتبہ کوئی خاتون اس عہدے پر ہوں گی ۔انہوں نے مزید کہا کہ فخر النساء کی کتاب حقائق پر مبنی ہے ،یہ تاریخ کا ایک حصہ بنے گی ۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ