ڈی آئی خان میں دھماکا ،پی ٹی آئی امیدوار اکرام گنڈا پور سمیت 4 جاں بحق ،اکرم درانی پر پھر قاتلانہ حملہ

170
ڈیرہ اسماعیل خان: بم حملے سے تباہ ہونے والی پی ٹی آئی امیدوار اکرام اللہ گنڈا پوری کی گاڑی
ڈیرہ اسماعیل خان: بم حملے سے تباہ ہونے والی پی ٹی آئی امیدوار اکرام اللہ گنڈا پوری کی گاڑی

ڈی آئی خان/ بنوں/ اسلام آباد (خبر ایجنسیاں)ڈیرہ اسماعیل خان میں دھماکے کے نتیجے میں تحریک انصاف کے امیدوار اورسابق صوبائی وزیر اکرام اللہ گنڈا پور سمیت 4افراد جاں بحق اور متعدد زخمی ہوگئے جب کہ بنوں میں متحدہ مجلس عمل کے امیدوار اور سابق وزیراعلیٰ اکرم خان درانی پر ایک اور قاتلانہ حملہ کیاگیا جس میں وہ بال بال بچ گئے۔پولیس کے مطابق پہلا واقعہ ڈیرہ اسماعیل خان کی تحصیل کولاچی میں اتوار کی صبح اس وقت پیش آیا جب پی کے 99 سے پی ٹی آئی کے امیدوار اکرام اللہ گنڈاپور کی گاڑی کو بارودی مواد سے نشانا بنایا گیا جس میں سابق صوبائی وزیر اوران کے ڈرائیور سمیت متعدد افراد شدید زخمی ہوئے۔سیکورٹی فورسز نے علاقے کو گھیرے میں لے لیا جب کہ امدادی ٹیموں نے زخمیوں کو قریبی اسپتال منتقل کیا ۔ایس ایچ او کولاچی کے مطابق زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے اکرام اللہ گنڈا پور اور ان کے ڈرائیور سمیت 4افراد جاں بحق ہو گئے ۔مقامی ذرائع کا کہنا ہے کہ دھماکا خودکش تھا تاہم اب تک سرکاری طور پر اس تصدیق نہیں ہوسکی ہے۔ پولیس کے مطابق اکرام اللہ گنڈا پور 5سال قبل ہلاک ہونے والے اپنے بھائی اور سابق صوبائی وزیر اسرار اللہ گنڈاپور کی ہلاکت میں ملوث ملزمان کی عدم گرفتاری کے خلاف منعقدہ ایک احتجاجی دھرنے میں شرکت کے لیے جارہے تھے کہ اس دوران ان کی گاڑی پر حملہ کیا گیا۔یاد رہے کہ اسرار اللہ گنڈا پور کو ایک خودکش حملے میں نشانہ بنایا گیا تھا۔ مقتول کے بھائیوں نے ان کے قتل کا الزام پی ٹی آئی ڈیرہ اسماعیل خان کے ایک اہم رہنما پر لگایا تھا تاہم ایف آئی آر میں ان کا نام ہونے کے باوجود ابھی تک اس ضمن میں کوئی گرفتاری عمل میں نہیں لائی گئی ہے۔ ادھر ضلع بنوں میں متحدہ مجلس عمل کے امیدوار اور سابق وزیر اعلیٰ اکرم خان درانی کی گاڑی پر مسلح افراد کی طرف سے فائرنگ کی گئی ہے جس میں وہ محفوظ رہے ہیں۔پولیس کے مطابق اکرم درانی انتخابی مہم کے سلسلے میں بنوں کے نواحی گاؤں بسیہ خیل جارہے تھے کہ سٹی کلہ کے مقام پر نامعلوم افراد نے ان کی گاڑی پر فائرنگ کی تاہم گاڑی بلٹ پروف ہونے کی وجہ سے کوئی جانی نقصان نہیں ہوا۔ پولیس نے ملزمان کی تلاش شروع کردی ہے۔علاوہ ازیں صدرمملکت ممنون حسین ‘ نگراں وزیراعظم جسٹس رٹیائرڈ ناصرالملک ‘ سراج الحق ‘ عمران خان ‘ بلاول زرداری ‘ خورشید شاہ و دیگر سیاسی ومذہبی رہنماؤں کی جانب سے دونوں واقعات کی مذمت کی گئی ہے ۔ٍ

Print Friendly, PDF & Email
حصہ