یمن: اتحادی فوج کی بمباری میں 4 حوثی رہنما ہلاک

72
صنعا: یمنی فوج ضلع باقم میں پیش قدمی کرتے ہوئے اہم پہاڑی علاقے میں داخل ہو رہی ہے
صنعا: یمنی فوج ضلع باقم میں پیش قدمی کرتے ہوئے اہم پہاڑی علاقے میں داخل ہو رہی ہے

صنعا (انٹرنیشنل ڈیسک) یمن میں آئینی حکومت کی بحالی کے لیے سرگرم عرب عسکری اتحاد کے مطابق اتحادی فوج کی تازہ بمباری کے نتیجے میں مشرقی صنعا میں نہم کے محاذ پر کم از کم 4 حوثی رہنما مارے گئے ہیں۔ عرب ٹی وی کے مطابق یمن کی سرکاری فوج کی طرف سے جاری ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ دارالحکومت صنعا کے مشرق میں نہم کے محاذ پر عرب اتحادی فوج کی بمباری کے نتیجے میں 4 حوثی رہنما ہلاک ہوگئے ۔ مقتول رہنماؤں میں سے ایک کی شناخت یاسر عبداللہ کے نام سے کی گئی ہے جبکہ دوسروں کا تعلق صعدہ صوبے سے ہے ۔ آئینی فوج کے مطابق مقتول یاسر عامر نہم ضلع میں حوثیوں کا اہم ترین فیلڈ کمانڈر تھا۔ دوسری جانب عرب ذرائع ابلاغ کے مطابق یمن کے صوبے صعدہ میں سرکاری فوج عرب اتحاد کی مدد سے باقم ضلع کے اندر داخل ہونے کے قریب پہنچ چکی ہے۔ یمنی فوج کے خصوصی بریگیڈ 102 کے کمانڈر بریگیڈیر جنرل یاسر الحارثی نے عرب ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ فوج نے باقم ضلع کے مرکز کو تمام اطراف سے گھیرے میں لے لیا ہے اور گزشتہ ہفتے شروع ہونے والے فوجی آپریشن کا اختتام قریب آ چکا ہے۔ الحارثی کے مطابق یمنی فوج باقم ضلع میں داخل ہونے سے چند میٹر کی دُوری پر ہے ۔ الحارثی نے واضح کیا کہ حوثیوں کی کمر ٹوٹ چکی ہے جس نے باغیوں کو مجبور کر دیا ہے کہ وہ اپنی صفوں میں موجود بچوں کو لڑائی کے محاذوں پر جھونکیں۔ اُدھر یمنی فوج نے عرب اتحاد کی فورسز کی معاونت سے صعدہ کے شمال میں باقم ضلع کے مغرب میں واقع تزویراتی نوعیت کے کئی ٹھکانوں کو واپس لے کر ان پر مکمل کنٹرول حاصل کر لیا ہے ۔ یہ پیش رفت حوثی ملیشیا کے ساتھ گھمسان کی لڑائی کے بعد سامنے آئی۔ عسکری کمانڈر کے مطابق عرب اتحاد کی معاونت سے یمنی فوج اور سیکورٹی فورسز نے باقم ضلع کے مرکز کے مغرب میں حوثی ملیشیا کی دراندازی کی کوشش ناکام بنا دی۔ فوج کے جوابی حملے میں باقم ضلع کے مرکز کے مغرب میں بقیہ ماندہ علاقوں کو بھی واپس لے لیا گیا ہے۔ مذکورہ ذریعے نے واضح کیا کہ اس دوران باغیوں کو بڑا نقصان اٹھانا پڑا ہے ۔
یمن ؍ حوثی رہنما ہلاک

Print Friendly, PDF & Email
حصہ