ٹرمپ کی ترکی میں گرفتار امریکی پادری کو رہا کرنے کی اپیل

166
ازمیر: گرفتار امریکی پادری کے وکیل میڈیا کو تفصیلات بتارہے ہیں‘ چھوٹی تصویر انڈریو برنسن کی ہے
ازمیر: گرفتار امریکی پادری کے وکیل میڈیا کو تفصیلات بتارہے ہیں‘ چھوٹی تصویر انڈریو برنسن کی ہے

واشنگٹن(انٹرنیشنل ڈیسک) صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ترکی میں زیر حراست امریکی پادری کی رہائی کے لیے ہم منصب رجب طیب اردوان سے اپیل کردی۔ بدھ کے روز اپنے ٹوئٹر پیغام میں ٹرمپ کا کہنا تھا کہ امریکی پادری کو رہا نہ کیا جانا ترکی کے لیے عار کی بات ہے۔ ٹرمپ نے مزید لکھا کہ اردوان کو چاہیے کہ اس کی رہائی کے لیے کوشش کریں۔ ٹرمپ نےامریکی پادری کو بے قصور بھی قرار دے دیا۔ واضح رہیکہ ترکی کی ایک مقامی عدالت نے زیرحراست امریکی پادری کو فیصلہ سنائے جانے تک پابند سلاسل رکھنے کا حکم دیا ہے۔ زیر حراست امریکی پادری آنڈرو برانسن پر ترکی کی جاسوسی اور ملک میں ناکام فوجی بغاوت کے مبینہ منصوبہ ساز فتح اللہ گولن کی جماعت کی مدد کرنے کے الزامات عائد کیے گئے ہیں۔ ذرائع کے مطابق برانسن کے ٹرائل کی وجہ سے ترکی اور امریکا کے درمیان تناؤ بھی پایا جا رہا ہے۔ خبررساں اداروں کے مطابق امریکی ریاست نارتھ کیرولینا کے رہایشی آنڈرو برانسن 20 سال سے ترکی میں مقیم ہیں۔ ترک حکومت نے ان پر 2016ء کی ناکام فوجی بغاوت میں باغیوں کی مدد کرنے اور کالعدم کردستان ور کرز پارٹی کی مسلح امداد کرنے کا الزام عائد کیا ہے۔ برانسن کے ٹرائل کا آغاز رواں سال کے اوائل میں ہوا تھا۔ جرم ثابت ہونے کی صورت میں انہیں 35 سال قید کی سزا کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔ دوسری جانب ازمیر کی ایک صوبائی عدالت کی طرف سے پادری کو بدستور قید میں رکھنے کے فیصلے پر انقرہ میں متعین قائم مقام امریکی سفیر نے مایوسی کا اظہار کیا ہے۔
امریکی پادری

Print Friendly, PDF & Email
حصہ