یوم شہدا پر مقبوضہ کشمیر میں مکمل ہڑتال اور مظاہرے متعدد زخمی،حریت قیادت نظر بند 

73

سری نگر(خبر ایجنسیاں) مقبوضہ کشمیر میں13جولائی 1931ء کو 22 افراد کی شہادت کے حوالے سے کنٹرول لائن کے دونوں اطراف اور دنیا بھر میں مقیم کشمیریوں نے جمعے کو یو م شہدائے کشمیر اس عزم کی تجدید کے ساتھ منایا کہ وہ اپنے ناقابل تنسیخ حق، حق خود ارادیت کے حصول تک شہداء کے مشن کو جاری رکھیں گے۔ کشمیر میڈیاسروس کے مطابق مقبوضہ کشمیر میں مکمل ہڑتال کی گئی ۔ جس کی کال سید علی گیلانی، میر واعظ عمر فاروق اور محمد یاسین ملک پر مشتمل مشترکہ حریت قیادت نے دی تھی ۔ قابض انتظامیہ نے نقشبند صاحب سری نگر جہاں 13جولائی کے شہداء دفن ہیں ،کی طرف لوگوں کو مارچ سے روکنے کے لیے سری نگر اور کپواڑہ میں پابندیاں اور دیگر تمام بڑے قصبوں میں بھاری تعداد میں بھارتی فوجی اور پولیس اہلکار تعینات کر دیے تھے۔ انتظامیہ نے سید علی گیلانی، محمداشرف صحرائی، محمد یاسین ملک ، ظفر اکبر بٹ ، عمر عادل ڈار اور دیگر حریت رہنماؤں کو مارچ کی قیادت سے روکنے کے لیے گھروں اور تھانوں میں نظربند رکھا۔ بھارتی پولیس نے میر واعظ عمر فاروق کو اس وقت گرفتار کر لیا جب انہوں نے گھر میں اپنی نظر بندی کی پرواہ نہ کرتے ہوئے باہرنکل کر مارچ کی قیادت کی کوشش کی۔ انتظامیہ نے لوگوں کو جامع مسجد سری نگر، جامع مسجد ترہگام کپواڑہ اور جامع مسجد چک پورہ کپواڑہ اور دیگر مساجد میں جمعے کی نما ز پڑھنے سے روک دیا۔ 13 جولائی 1931ء کو ڈوگرہ مہاراجا ہری سنگھ کے فوجیوں نے سری نگر سینٹرل جیل کے باہر 22 کشمیریوں کو اس وقت گولیاں مار کر شہید کردیا تھا جب وہ عبدالقدیر نامی ایک شخص کے خلاف مقدمے کی سماعت کے موقع پر اظہار یکجہتی کے لیے وہاں اکٹھے ہوئے تھے۔ عبدالقدیر نے کشمیریوں کو ڈوگرہ راج کے خلاف اٹھ کھڑے ہونے کے لیے کہا تھا۔ آزادی پسند رہنماؤں علی گیلانی اور میرواعظ عمر فاروقنے اپنے بیانات میں13جولائی کے شہداء کو زبردست خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہاکہ 1931ء کے شہداء کا مشن ابھی تک تشنہ تکمیل ہے اور جاری جدوجہد آزادی ان شہداء کے مشن کا تسلسل ہے‘ 13جولائی 1931ء کے شہداء کو خراج عقیدت پیش کرتے ہیں، عالمی برادری کی خاموشی تشویشناک ہے۔ ادھر ضلع کپواڑہ کے علاقے ترہگام میں مظاہرین پر بھارتی فوجیوں کی طرف سے طاقت کے وحشیانہ استعمال سے متعدد افراد زخمی ہو گئے۔ ضلع اسلام آباد کے علاقے اچھہ بل میں ایک حملے میں ایک افسر سمیت بھارتی فوج کے 2 اہلکار ہلاک اور ایک زخمی ہو گیا۔ اسلام آباد میں کل جماعتی حریت کانفرنس آزاد کشمیر شاخ کے دفتر میں منعقدہ ایک سیمینار منعقد ہوا‘ ورلڈ کشمیر اوئیرنس فورم کے جنرل سیکرٹری ڈاکٹر غلام نبی فائی نے واشنگٹن سے جاری ایک بیان میں 13جولائی1931ء کے شہداء کو زبردست خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا ہے کہ کشمیری عوام کی قربانیوں کو رائیگاں نہیں جانے دیا جائے گا‘ برسلز میں بھی ایک احتجاجی مظاہرہ کیاگیا۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ