پر امن احتجاج سب کا حق ہے،لاہور کا مھاصرہ سمجھ سے بالاتر ہے،بلاول 

59

لاہور/ اسلام آباد (نمائندہ جسارت) پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول زرداری نے کہا ہے کہ پر امن احتجاج سب کا حق اورجمہوری عمل کا حصہ ہے‘ نواز شریف کی نیب کورٹ کی طرف سے سزا کے بعد ان کی گرفتاری تو سمجھ میں آتی ہے مگر لاہور کا محاصرہ، امیدواروں اور کارکنوں کی گرفتاریاں سمجھ سے بالاتر ہیں‘ کٹھ پتلی وزیراعظم (عمران خان) کو لاہور ائرپورٹ سے جانے دیا گیا لیکن ہمیں روک دیا گیا۔ جمعے کو سماجی ویب سائٹ ٹوئٹر پر بلاول
زرداری نے لاہور کے علامہ اقبال انٹرنیشنل ائرپورٹ سے پشاور کے لیے جانے کی اجازت نہ ملنے پر نام لیے بغیر عمران خان کو شدید تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ کٹھ پتلی وزیراعظم کو لاہور ائرپورٹ سے جانے دیا گیا لیکن ہمیں روک دیا گیا جس کے2 گھنٹے بعد ہمیں وہاں سے جانے کی اجازت دی گئی جبکہ ہم اُس وقت تک بذریعہ روڈ روانہ ہو چکے تھے اب اس اجازت کا کیا فائدہ؟۔ چیئرمین پیپلز پارٹی کے جہاز کو اڑان بھرنے کی اجازت نہ دینے پر پیپلز پارٹی کی طرف سے شدید ردعمل اور مذمت کی گئی اس حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے پیپلز پارٹی کے مرکزی ترجمان مولا بخش چانڈیو نے کہا کہ لاڈلے کو جانے کی اجازت دی گئی جبکہ چیئرمین پیپلز پارٹی کے جہاز کو روکا گیا یہ کھلا تضاد، دھونس اور قبل ازوقت انتخاب دھاندلی ہے‘ ہم الیکشن کمیشن سے مطالبہ کرتے ہیں کہ اس کا سخت نوٹس لیا جائے‘ اگر اس طرح کے الیکشن کرانے ہیں تو جس کو حکومت دینی ہے‘ اس کا پہلے سے اعلان کردیا جائے تاکہ عوام کو پریشانی نہ اٹھانی پڑی‘ بلاول زرداری کے لیے کراچی سے لاہور تک رکاوٹیں کھڑی کی گئیں جبکہ ایک لاڈلے کے لیے میدان کھلا چھوڑ دیا گیا ہے ‘ پیپلز پارٹی کے چیئرمین کی عوامی مقبولیت دیکھ کر مخالفین کی نیندیں حرام ہوچکی ہیں ‘ اگر اس صورتحال میں الیکشن ہوئے تو پیپلز پارٹی نتائج کبھی تسلیم نہیں کرے گی۔ ڈاکٹر نفیسہ شاہ نے کہا کہ جب سے پنجاب کی طرف بلاول زرداری نے رخ کیا ہے مخالفین کی بوکھلاہٹ واضح ہوگئی ہے۔ سید نیئر حسین بخاری نے کہا کہ نگران حکومت اپنی ساکھ قائم کرنے میں ناکام ہوچکی ہے اور بلاول زرداری کی انتخابی مہم میں رکاوٹیں ڈالی جا رہی ہیں۔ قمر الزماں کائرہ نے کہا کہ بلاول زرداری کے پنجاب میں داخلے کے بعد مسلسل رکاوٹیں ڈالی جا رہی ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ