بھارت کشمیر کے منصفانہ حل کیلیے ریاست کو متنازع تسلیم کرے، صلاح الدین

52

مظفرآباد(صباح نیوز) متحدہ جہاد کونسل جموں کشمیر کے چیئرمین سید صلاح الدین نے کہا ہے کہ بھارت مسئلہ کشمیر کے دیرپا اور منصفانہ حل کے لیے ریاست کو متنازع تسلیم کرے، پاکستان سمیت جموں کشمیر کی مسلمہ قیادت کے ساتھ سہ فریقی مذاکرات اقوام متحدہ کی قراردادوں کے عین مطابق با
معنی بات چیت کاآغاز ہو تو ہم اب بھی ہتھیار رکھ سکتے ہیں۔ان خیالات کا اظہار سید صلاح الدین احمد نے متحدہ جہاد کونسل جموں کشمیر کے زیر اہتمام شہدائے کشمیر کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔انہوں نے کہا کہ 13جولائی کا دن جموں کشمیر کی تحریک آزادی میں ایک یادگار نظریاتی، فکری اور تاریخی دن ہے، 13جولائی کے شہداء نے اعلائے کلمتہ اللہ اور وطن عزیز جموں کشمیر کی آزادی کے لیے مقدس لہو پیش کیا، کشمیری عوام وقت کے جابر اور غاصب ملک بھارت کیخلاف تاریخ ساز عظیم قربانیوں سے لبریزجدوجہد آزادی جاری رکھے ہوئے ہیں۔ سید صلاح الدین نے کہا کہ جموں کشمیر کے عوام بھارت کی 7 لاکھ مسلح افواج کا مقابلہ پتھروں اور ڈنڈوں سے کررہے ہیں، کشمیر میں بھارت جنگ ہار رہا ہے۔ کشمیری عوام نے 5 سے زاید جانوں کے نظرانے پیش کیے۔ بھارت نہ تو اقوام متحدہ کی قراردادوں کو مانتا ہے نہ ہی انسانی حقوق کی پامالیوں سے باز آرہا ہے اور نہ ہی کشمیر کو متنازع تسلیم کرتا ہے ان حالات میں پاکستان کی قانونی، اخلاقی اور شرعی ذمے داری ہے کہ کشمیر کی آزادی کے لیے اپنی مسلح افواج کو مقبوضہ جموں کشمیر میں داخل کرے یا پھر پاکستان کشمیری مجاہدین کی عسکری مدد کرے ۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ