انتخابی مہم کے دوران دہشت گردی کا بڑھتا رجحان خطرناک ہے،لیاقت بلوچ

171
لاہور: مجلس عمل کے این اے 130 سے امیدوار لیاقت بلوچ انتخابی دفتر کا افتتاح کررہے ہیں
لاہور: مجلس عمل کے این اے 130 سے امیدوار لیاقت بلوچ انتخابی دفتر کا افتتاح کررہے ہیں

لاہور (نمائندہ جسارت)متحدہ مجلس عمل اور جماعت اسلامی پاکستان کے سیکرٹری جنرل اور این اے 130 لاہور سے امیدوار قومی اسمبلی لیاقت بلوچ نے پشاور میں ہارون بلور اور 20 سیاسی کارکنوں کی شہادت پر دکھ ، صدمے کا اظہار اور شدید احتجاج کیا ہے ۔ انہوں نے کہاکہ بلور خاندان کی قربانیاں سیاسی تاریخ کا حصہ ہیں ۔ انتخابی مہم میں تشدد ، دہشت گردی اور باہم شدت کے جذبات کا بڑھتا رجحان خطرناک ہے ۔ سیکورٹی ادارے اور الیکشن کمیشن ضابطہ اخلاق اور سیاسی اخلاقیات کی خلاف ورزی پر سخت ترین اقدامات کریں۔ جمہوری اور سیاسی عمل کو ذاتیات اور سیاسی دشمنیوں کا شاخسانہ نہ بنایا جائے ۔لیاقت بلوچ نے اچھرہ ، شاہ کمال ، کرنال پورہ ، مسلم ٹاؤن میں کارنر میٹنگز اور غازی روڈ پر انتخابی دفتر کے افتتاح کے موقع پر سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ سیاسی انتشار ، کرپٹ سیاسی دھڑوں ، نااہل اور کرپٹ ناکارہ سیاسی مافیا سے نجات کا وقت آگیاہے ۔ انہوں نے کہاکہ عوام دینی جماعتوں کے اتحاد متحدہ مجلس عمل کا ساتھ دیں ، ان شاء اللہ ملک و ملت بحرانوں سے نکل آئے گا ۔ عوام کے مسائل کا حل نظام مصطفیؐ اور اسلام کے دائمی احکامات میں ہی ہے۔ لیاقت بلوچ نے کہاکہ متحدہ مجلس عمل نظام مصطفےٰؐ کا قیام ، آئین اور قانون کی بالادستی ، خواتین ، نوجوانوں اور اقلیتوں کے لیے باعزت سازگار نظام دے گی ۔ قومی وسائل کی منصفانہ تقسیم ، پانی کی قلت اور سستی بجلی کی فراہمی کے لیے ڈیم تعمیر کریں گے ۔ محب وطن عوام کے ہر طبقے پر اعتماد کر کے ملک میں خود انحصاری لائیں گے ۔ قرضوں اور سود کی لعنت سے نجات دلائیں گے ۔کارنر میٹنگز سے احمد سلمان بلوچ ، مولانا احرار ، عبدالودودقاضی ، عبدالرحمن بلوچ ، عاصم مخدوم اور احمد رضا بٹ نے بھی خطاب کیا ۔ علاقے کے علما ، معززین اور سماجی شخصیات نے لیاقت بلوچ کی حمایت کا اعلان کیا اور مطالبہ کیاکہ اسلام آباد ہائیکورٹ کے عدالتی فیصلے میں قانون ختم نبوت پر کاری وار کے ملزمان کے خلاف سخت کارروائی کی جائے ۔ عدالتی فیصلوں پر عملدرآمد میں پسند اور ناپسند کا دروازہ بند کیا جائے ۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ