رمضان المبارک کا تقدس اور برقی میڈیا

152

بینا حسین خالدی
ایڈووکیٹ

میں الیکٹرونک میڈیا کے اُن تمام چینلوں اور ان تمام حضرات کو یاد دلانا چاہتی ہوں جنہوں نے جسٹس شوکت صدیقی کے رمضان ٹرانسمیشن کے بارے میں تفصیلی فیصلے کے خلاف اپیل دائر کی ہے۔ اسلام آباد ہائی کورٹ کے رمضان ٹرانسمیشن سے متعلق تفصیلی فیصلے کے خلاف نیوز چینلوں نے جو اپیل دائر کی ہے اس اپیل پر فیصلہ خواہ کچھ بھی آئے لیکن اپیل دائر کرنے والوں کی بے دین ذہنیت کھل کر سامنے آئی ہے۔ ان کا اپیل دائر کرنا اس امر کی عکاسی کرتا ہے کہ یہ لوگ رمضان المبارک کا تقدس پامال کرنے پر مُصر ہیں اور اپنی بیہودہ رمضان ٹرانسمیشن کو ہر صورت میں نشر کرنا چاہتے ہیں۔ بدی اور بے حیائی کے لیے دوڑ دھوپ کرنے والے یہ لوگ شاید خوفِ خدا اور خوفِ آخرت کا کوئی تصور بھی ذہن میں نہیں رکھتے، پھر ایسے لوگ کس منہ سے اپنے آپ کو مسلمان کہتے ہیں؟۔ رمضان المبارک کے تقدس کے برخلاف سرکس میلوں اور مرد وزن کے مخلوط پروگراموں پر مبنی یہ کھیل تماشے دین اسلام کا مذاق اُرانے کے لیے تیار کیے جاتے ہیں۔ اللہ تعالیٰ بھی ایسے لوگوں کے ساتھ مذاق کرتا ہے اور انہیں ڈھیل دیے جاتا ہے تا کہ یہ اپنی سرکشی میں اور بہکتے چلے جائیں۔ ہمارے نزدیک یہ تمام لوگ اور اس ٹرانسمیشن میں کام کرنے والے تمام اداکار اور ماڈلز قابل مذمت ہیں۔ الیکٹرونک میڈیا کے یہ چینل ہماری مذہبی اقدار و روایات پر کھل کر کلہاڑی چلانے کا کام دھڑلے سے کررہے ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ