ایف بی آر کے لیے ڈھائی ارب روپے کافنڈ منظورکر لیا

95

کراچی( اسٹاف رپورٹر)فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) نے اگلے مالی سال 2018-19کے اخراجات کے لیے وفاقی وزارت خزانہ سے 2ارب58کروڑ روپے کافنڈ منظورکراکے اہم کامیابی حاصل کرلی ہے۔ فنڈز کی مانگ ‘ ایف بی آر‘ کسٹمز اور ان لینڈ ریونیو ڈپارٹمنٹس نے ارسال کی تھیں۔ ذرائع کے مطابق وزارت خزانہ نے ایف بی آر کے لیے ریونیو ڈویژن کی جانب سے بھیجی گئی 3کروڑ78لاکھ روپے کی اضافی مانگ بھی منظور کرلی ہے جس کے بعد ایف بی آر کواگلے مالی سال کے دوران اخراجات کے لیے مجموعی طور پر 2ارب62کروڑ 20لاکھ روپے کی خطیر رقم جاری کی جائے گی۔ واضح رہے کہ وفاقی مشیر خزانہ نے قومی اسمبلی سے ایف بی آر اور ریونیو ڈویژن کی ارسال کردہ مذکورہ فنڈز کی منظوری حاصل کرلی تھی۔ ذرائع نے بتایا کہ پاکستان کسٹمز کواگلے مالی سال کے دوران اخراجات کے لیے80کروڑ 88لاکھ روپے ‘ ان لینڈ ریونیو کو اخراجات کے لیے ایک ارب 33 کروڑ 35لاکھ روپے ملیں گے۔
ایف بی آر کو یہ خطیر رقم زیادہ تر چین پاکستان اقتصادی راہداری(سی پیک) کے تناظر میں دفاتر کی تعمیر اور کمپیوٹرز‘ مشنری‘ ایکوپئمنٹس اور افرادی قوت بڑھانے پرخرچ کی جائے گی۔ علاوہ ازیں ایف بی آر کے ملک بھرمیں درجنوں ٹیکس دفاتر کرائے کی عمارتوں پر قائم ہیں۔ نئے ٹیکس دفاتر کی تعمیر سے ایف بی آر کو کرایوں کی مد میں کروڑوں روپے کی بچت ہوگی۔ ذرائع نے مزید بتایا کہ افرادی قوت اور آئی ٹی سہولتوں کے شدید فقدان کے باعث ایف بی آر کو ٹیکس دائرہ بڑھانے میں شدید دشواریوں کاسامناہے جس سے قومی خزانے کو سالانہ کئی ارب روپے نقصان ہورہاہے۔ اب فنڈز کی دستیابی سے ایف بی آر ورک فورس بھرتی کرکے جدید ترین ٹیکنالوجی کے ذریعہ ٹیکس چوروں اور ٹیکس نادہندگان کے گرد گھیرا تنگ کرسکے گا۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ