جعلی ادویات کے معاملے پر کسی کو اثر و رسوخ استعمال نہیں کرنے دیں گے، چیف جسٹس

105

لاہور (آن لائن) سپریم کورٹ رجسٹری میں جعلی ادویات کیس میں چیف جسٹس پاکستان میاں ثاقب نثار نے ریمارکس دیے کہ کسی کو جعلی
ادویات کے معاملے پر اپنا اثر و رسوخ استعمال کرنے کی اجازت نہیں دے سکتے، تکلیف دہ بات ہے کہ جعلی ادویات کے معاملے پر کام نہیں ہوا۔ تفصیلات کے مطابق چیف جسٹس پاکستان میاں ثاقب نثار کی سربراہی میں 3 رکنی بینچ نے سماعت کی۔ عدالتی حکم پر آئی جی پنجاب اور آرپی او بہاولپور راجا رفعت مختار عدالت میں پیش ہوئے۔ چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ میری اطلاعات کے مطابق آر پی او نے اپنے برادر نسبتی کی سپورٹ کی۔ لگتا ہے یہ بہت طاقتور لوگ ہیں، ہمارے کہنے پر ایک افسر نے فیکٹری پر چھاپہ مارا نیب نے کل اسے نوٹس جاری کر دیا ہے۔ عدالت نے ڈی جی ایف آئی اے کو جعلی ادویات پر تفتیش کر کے رپورٹ پیش کرنے کا حکم دیتے ہوئے سماعت ملتوی کردی۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ