مسلمانوں پر حملے‘ سری لنکا میں ہنگامی حالت نافذ

150
کولمبو: بدھ انتہاپسندوں کی جانب سے مسلمانوں پر حملوں کے بعد ہنگامی حالت نافذ کردی گئی ہے‘ تصاویر میں نذرآتش کی گئی مسجد اور املاک واضح ہیں‘ شہید کا جسد خاکی تدفین کے لیے لے جایا جارہا ہے
کولمبو: بدھ انتہاپسندوں کی جانب سے مسلمانوں پر حملوں کے بعد ہنگامی حالت نافذ کردی گئی ہے‘ تصاویر میں نذرآتش کی گئی مسجد اور املاک واضح ہیں‘ شہید کا جسد خاکی تدفین کے لیے لے جایا جارہا ہے

کولمبو (انٹرنیشنل ڈیسک) سری لنکا میں مسلمانوں کے خلاف فسادات روکنے کے لیے ملک بھر میں ایمرجنسی نافذ کر دی گئی ہے۔ ابھی تک ان فسادات میں 2 مسلمان جاں بحق ہوچکے ہیں، جب کہ درجنوں مساجد اور گھروں کو نذر آتش کردیا گیا یا شدید نقصان پہنچایا گیا ہے۔ سری لنکا میں مسلم مخالف فسادات شروع ہونے کے بعد کابینہ کے وزرا نے سخت اقدامات کا فیصلہ کرتے ہوئے ملک بھر میں دس روزہ ایمرجنسی نافذ کر دی ہے۔ سٹی پلاننگ کے وزیر رؤوف حکیم نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ فسادات کے مرکزی شہر کینڈی میں پولیس نے کرفیو نافذ کر دیا ہے۔ جاری ہونے والے بیان کے مطابق پہاڑوں کے دامن میں واقع کینڈی میں پولیس کمانڈوز کو تعینات کیا گیا ہے جب کہ یہی شہر غیرملکی سیاحوں کی پسندیدہ ترین منازل میں سے ایک ہے۔منگل کی صبح ایک مسلم نوجوان کی لاش ایک راکھ شدہ عمارت سے ملی ہے، جس کے بعد فسادات کی شدت کا خطرہ مزید بڑھ گیا تھا۔پولیس کو یہ اختیار بھی مل گیا ہے کہ وہ مشتبہ افراد کو دیکھتے ہی گرفتار کر سکتی ہے۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ