مشترکہ ،فادات کونسل کا اجلاس،خصوصی اقتصادی زونز کیلیے سفارشات طلب

463
اسلام آباد: وزیراعظم شاہد خاقان عباسی مشترکہ مفادات کونسل کے اجلاس کی صدارت کررہے ہیں
اسلام آباد: وزیراعظم شاہد خاقان عباسی مشترکہ مفادات کونسل کے اجلاس کی صدارت کررہے ہیں

اسلام آباد (صباح نیوز+مانیٹرنگ ڈیسک) مشترکہ مفادات کو نسل نے صوبوں سے سی پیک کے تحت خصوصی اقتصادی زونز کی ترجیحات سے متعلقتحریری سفارشات طلب کرلیں۔اعلیٰ تعلیمی اداروں کی نگرانی والحاق کو وفاق اور صوبوں کی مشترکہ ذمے داری قراردے دیا گیا۔قومی سطح پراعلیٰ تعلیم کے اداروں کے معیار کی جانچ کی باڈی بنانے پر اتفاق ہوگیا۔ہائر ایجوکیشن کمیشن میں صوبوں کی نمائندگی اور مزید اضافہ کیا جائے گا۔ کونسل نے گنے کے کاشتکاروں کو درپیش شدید مشکلات کا نوٹس لیتے ہوئے نیشنل فوڈ سیکورٹی اینڈ ریسرچ کو صوبوں کے ساتھ مل کر اس مسئلے کے جلد از جلد حل کی ہدایت کردی۔ بزرگ شہریوں کی فلاح و بہود کے لیے موثر قانون سازی پر بھی اتفاق ہوگیا ۔ یہ فیصلے پیر کو اسلام آباد میں وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی کی زیرصدارت ساڑھے 6گھنٹے طویل اجلاس میں ہوئے۔اجلاس میں وزیر اعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ، وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا پرویز خٹک، وزیراعلیٰ بلوچستان عبدالقدوس بزنجو شریک ہوئے جبکہ وزیر اعلیٰ پنجاب کی نمائندگی صوبائی وزیر خزانہ ڈاکٹر عائشہ غوث پاشا نے کی۔ اعلامیے کے مطابق سی سی آئی کے گزشتہ سال 24نومبر 2017ء کو ہونے والے اجلاس کے فیصلوں پر عملدرآمد کا جائزہ لیا گیا۔ وزیر فیڈرل ایجوکیشن اینڈ پروفیشنل ٹریننگ نے سی سی آئی کو اعلیٰ تعلیم کے حوالے سے وفاق اور صوبوں کے اختیار پر بریفنگ دی ۔اجلاس میں یہ بھی فیصلہ کیا گیا کہ وزیر اعظم تمام صوبوں سے 7ممتاز ماہرین تعلیم ایچ ای سی میں تعینات کریں گے۔ اعلامیے کے مطابق مشترکہ مفادات کونسل نے متعلقہ وزارتوں کو صوبوں کی مشاورت سے بزرگ شہریوں کی دیکھ بھال کے نیشنل پالیسی فریم ورک وضع کرنے کی ہدایت کی ہے۔ اعلامیے کے مطابق وزارت آبپاشی کو ارسا معاہدے کے تحت رپورٹ پیش کرنے کی ہدایت کی گئی ہے البتہ کے فور منصوبے کے تحت کراچی کواضافی پانی فراہم کرنے کی منظوری پھرمؤخر ہوگئی ہے.یاد رہے کہ موسم گرما کی آمد کے ساتھ ہی کراچی پانی کے شدید بحران میں مبتلا ہوجاتا ہے۔ ماہرین بھی اس شدید بحران کی پیش گوئی کر رہے ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ