افغانستان میں موجود دہشت گرد ،پاکستان اور روس کیلیے خطرہ ہیں،خواجہ آصف

187
ماسکو، وزیر خارجہ خواجہ آصف روسی ہم منصب کے ہمراہ دوطرفہ مذاکرات کررہے ہیں
ماسکو، وزیر خارجہ خواجہ آصف روسی ہم منصب کے ہمراہ دوطرفہ مذاکرات کررہے ہیں

ماسکو: (خبرایجنسیاں) وزیرِ خارجہ خواجہ آصف نے کہاہے کہ افغانستان میں موجود دہشت گرد پاکستان اور روس دونوں کے لیے خطرہ ہیں۔ روس کے دارالحکومت ماسکو میں روسی ہم منصب سرگئی لاروف کے ساتھ مشترکہ پریس کانفرنس میں ان کا کہنا تھا کہ افغانستان میں اس وقت تکلیف دہ صورتحال ہے،وہاں داعش کے بڑھتے ہوئے اثرو رسوخ، منشیات سے دہشت گردوں کو رقوم کی فراہمی پر تشویش ہے، افغان مسئلہ جنگ سے نہیں مذاکرات سے حل ہوگا، افغان رہنماؤں کی سربراہی میں مفاہمتی عمل ہی امن کا آخری آپشن ہے‘اس معاملے پر پاکستان اور روس ہم خیال ہیں، عالمی افواج نے گزشتہ 17سال سے افغانستان میں کچھ حاصل نہیں کیا، وہ اپنی ناکامیاں چھپانے کے لیے پاکستان اور دوسرے ممالک کو قربانی کا بکرا بنانا چاہتے ہیں، ہم نے ان الزامات کی تردید کی ہے اور ہم اپنی سرزمین پر کسی اور کی جنگ نہیں لڑ سکتے۔خواجہ آصف نے کہا کہ پاکستان دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پیچھے نہیں ہٹا۔ وزیرخارجہ کا یہ بھی کہنا تھا کہ پاکستان روس کے ساتھ تجارت، توانائی، صنعت، دفاع، دفاعی پیداوار، کلچر اور تعلیم سمیت تمام شعبوں میں تعلقات بڑھانا چاہتا ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ شنگھائی تعاون تنظیم کی رکنیت کے لیے روس کے شکرگزارہیں۔ اس موقع پر روسی وزیرِ خارجہ سرگئی لاروف نے کہا کہ امریکی افواج کی موجودگی میں داعش کا قدم جمانا کئی سوالات کو جنم دیتا ہے،امریکا افغانستان میں دہشت گردی اور منشیات کی روک تھام میں ناکام ہو گیا ہے۔ انہوں نے ایسے بغیر نشان کے ہیلی کاپٹرز کا ذکر بھی کیا جو دہشت گردوں کے علاقوں میں آتے جاتے رہتے ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ